بِسمِ اللهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيمِ

Allah, in the name of, the Most Affectionate, the Eternally Merciful

Religion & Ethics

Dedicated to ethics, religious tolerance, peace and love for humanity

اخلاقیات اور مذہب

اعلی اخلاقی رویوں، مذہبی رواداری، امن اور انسانیت کی محبت سے وابستہ

اردو اور عربی تحریروںکو بہتر دیکھنے کے لئے نسخ اور نستعلیق فانٹ یہاں سے ڈاؤن لوڈ کیجیے

Home

علوم الحدیث: ایک تعارف

 

کتاب کوڈاؤن لوڈکرنے کے لئے یہاں کلک کیجیے (سائز 5MB)

 

حصہ دوم: خبر (حدیث)

یونٹ 3: خبر مقبول

Religion & Ethics

Personality Development

Islamic Studies

Quranic Arabic Learning

Adventure & Tourism

Risk Management

Your Questions & Comments

Urdu & Arabic Setup

About the Founder

سبق 9: ناسخ اور منسوخ حدیث

"نسخ" کی تعریف

لغوی اعتبار سے نسخ کے دو معانی ہیں۔ ایک تو "ازالہ" ہے یعنی کسی چیز کو زائل کرنا جیسے سورج نے سائے کو زائل کر دیا۔ دوسرا معنی ہے کسی چیز کو نقل کرنا جیسا کہ اگر کسی کتاب میں سے کوئی بات نقل کی جائے تو کہا جائے گا کہ میں نے کتاب کو نسخ کر دیا ہے۔ ناسخ، منسوخ کو زائل کر دیتا ہے یا پھر اسے منتقل کر دیتا ہے۔

††††††††† اصطلاحی مفہوم میں شریعت کے ایک حکم کی جگہ دوسرا حکم جاری کرنے کا نام 'نسخ' ہے۔

نوٹ: یہاں یہ سوال پیدا ہو سکتا ہے کہ شریعت کے بعض احکامات کو منسوخ کر دیا گیا۔ اس کی بنیادی وجہ یہ ہے کہ بعض احکامات کا تعلق مخصوص صورتحال سے ہوا کرتا ہے۔ جب وہ مخصوص صورتحال ختم ہو جاتی ہے تو اس کا حکم بھی باقی نہیں رہا کرتا۔

مثال کے طور پر قرآن مجید میں شراب کو ایک دم حرام نہیں کیا گیا کیونکہ عرب شراب کے بہت زیادہ عادی تھے۔ پہلے شراب کی برائی بیان کر کے اس سے نفرت دلائی گئی۔ پھر انہیں نماز کے اوقات میں شراب پینے سے منع کیا گیا۔ جب لوگوں کا ذہن اس معاملے میں ایک خاص پختگی کو پہنچ گیا تو شراب کی مکمل حرمت کا حکم نازل ہوا۔ یہی معاملہ حدیث کے ناسخ و منسوخ کا ہے۔

"نسخ" کی اہمیت، مشکلات اور اس میں مشہور ماہرین

حدیث کے ناسخ و منسوخ کا علم مشکل ترین مہم ہے۔ زہری کہتے ہیں، "حدیث کے ناسخ و منسوخ کا علم حاصل کرنے کی کوشش نے اہل علم کو تھکا دیا ہے۔" اس علم کے سب سے مشہور ماہر امام شافعی ہیں۔ وہ اس کام میں ید طولی رکھتے تھے اور دوسروں کی نسبت اس میدان میں بہت آگے تھے۔

††††††††† امام شافعی جب مصر چلے گئے تو امام احمد بن حنبل نے ابن وارہ سے کہا، "کیا آپ نے شافعی کی کتب لکھ رکھی ہیں؟" انہوں نے کہا، "جی نہیں۔" امام احمد کہنے لگے، "یہ تو آپ نے بڑی غلطی کی۔ ہم میں سے کوئی مجمل و مفسر اور حدیث کے ناسخ و منسوخ کا علم نہیں رکھتا تھا۔ جب ہم امام شافعی کے ساتھ بیٹھنے لگے تو ہمیں یہ چیزیں معلوم ہوئیں۔"

ناسخ و منسوخ کا علم کیسے ہوتا ہے؟

حدیث کے ناسخ و منسوخ کا علم ان طریقوں میں سے کسی ایک سے ہوتا ہے:

       رسول اللہ صلی اللہ علیہ واٰلہ وسلم نے تصریح فرما دی ہو جیسے مسلم میں سیدنا بریدہ رضی اللہ عنہ سے مروی حدیث ہے کہ آپ نے فرمایا: "میں نے تمہیں قبور کی زیارت سے منع کیا تھا، اب تم ان کی زیارت کر لیا کرو کیونکہ یہ آخرت کی یاد دلاتی ہیں۔"

       کسی صحابی نے وضاحت کر دی ہو جیسا کہ سیدنا جابر بن عبداللہ رضی اللہ عنہ بیان کرتے ہیں: رسول اللہ صلی اللہ علیہ واٰلہ وسلم نے جو آخری حکم دیے ان میں سے ایک یہ ہے کہ جس نے آگ پر پکی ہوئی چیز کھائی ہو، اسے دوبارہ وضو کرنے کی ضرورت نہیں ہے۔ اسے سنن کے مصنفین نے روایت کیا ہے۔

       تاریخ کے علم سے ناسخ و منسوخ کا علم ہو جائے۔ مثلاً سیدنا شداد بن اوس رضی اللہ عنہ کی حدیث ہے کہ پچھنے لگانے اور لگوانے والے دونوں کا روزہ ٹوٹ جاتا ہے۔ (ابو داؤد) یہ حدیث سیدنا ابن عباس رضی اللہ عنہما کی حدیث سے منسوخ ہو گئی ہے کہ نبی کریم صلی اللہ علیہ واٰلہ وسلم نے روزے کی حالت میں پچھنے لگوائے۔ (مسلم) شداد کی حدیث کے بعض طرق سے یہ معلوم ہوتا ہے کہ یہ حدیث فتح مکہ کے سال (8ھ) کی ہے جبکہ ابن عباس رضی اللہ عنہما حضور کے ساتھ حجۃ الوداع (10ھ) میں شریک تھے۔

       اجماع کے ذریعے ناسخ و منسوخ کا علم ہو جائے۔ جیسا کہ حدیث میں آتا ہے کہ "جو شراب پئے اسے کوڑے مارو اور جو چوتھی مرتبہ ایسا کرتا پکڑا جائے، اسے موت کی سزا دے دو۔" (ابو داؤد و ترمذی) امام نووی کہتے ہیں کہ اس حدیث کے منسوخ ہونے پر اجماع ہے۔ اجماع بذات خود نہ تو حدیث کو منسوخ کرتا ہے اور نہ ہی خود منسوخ ہوتا ہے لیکن یہ ناسخ و منسوخ کو متعین کر سکتا ہے۔

حدیث کے ناسخ و منسوخ سے متعلق اہم تصانیف

       ابو بکر محمد بن موسی الحازمی کی الاعتبار فی الناسخ و المنسوخ فی الآثار

       امام احمد کی الناسخ و المنسوخ

       ابن جوزی کی تجرید الاحادیث المنسوخۃ

سوالات اور اسائنمنٹ

       بعض احکامات کو منسوخ کر دینے کی وجہ کیا تھی؟

       اوپر بیان کردہ کتب کو انٹرنیٹ پر تلاش کیجیے۔

 

اگلا سبق†††††† ††††††††† ††††††††† ††††††††† ††††††††† فہرست††††††† ††††††††† ††††††††† ††††††††† ††††††††† پچھلا سبق

مصنف کی دیگر تحریریں

قرآنی عربی پروگرام/سفرنامہ ترکی/††مسلم دنیا اور ذہنی، فکری اور نفسیاتی غلامی/اسلام میں جسمانی و ذہنی غلامی کے انسداد کی تاریخ ††/تعمیر شخصیت پروگرام/قرآن اور بائبلکے دیس میں/علوم الحدیث: ایک تعارف ††/کتاب الرسالہ: امام شافعی کی اصول فقہ پر پہلی کتاب کا اردو ترجمہ و تلخیص/اسلام اور دور حاضر کی تبدیلیاں ††/ایڈورٹائزنگ کا اخلاقی پہلو سے جائزہ ††/الحاد جدید کے مغربی اور مسلم معاشروں پر اثرات ††/اسلام اور نسلی و قومی امتیاز ††/اپنی شخصیت اور کردار کی تعمیر کیسے کی جائے؟/مایوسی کا علاج کیوں کر ممکن ہے؟/دور جدید میں دعوت دین کا طریق کار ††/اسلام کا خطرہ: محض ایک وہم یا حقیقت/Quranic Concept of Human Life Cycle/Empirical Evidence of Godís Accountability

 

php hit counter