بِسمِ اللهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيمِ

Allah, in the name of, the Most Affectionate, the Eternally Merciful

Religion & Ethics

Dedicated to ethics, religious tolerance, peace and love for humanity

اخلاقیات اور مذہب

اعلی اخلاقی رویوں، مذہبی رواداری، امن اور انسانیت کی محبت سے وابستہ

اردو اور عربی تحریروںکو بہتر دیکھنے کے لئے نسخ اور نستعلیق فانٹ یہاں سے ڈاؤن لوڈ کیجیے

Home

علوم الحدیث: ایک تعارف

 

کتاب کوڈاؤن لوڈکرنے کے لئے یہاں کلک کیجیے (سائز 5MB)

 

حصہ پنجم: اسناد اور اس سے متعلقہ علوم

یونٹ 12: اسماء الرجال (راویوں کا علم)

Religion & Ethics

Personality Development

Islamic Studies

Quranic Arabic Learning

Adventure & Tourism

Risk Management

Your Questions & Comments

Urdu & Arabic Setup

About the Founder

سبق 8: مبُہَم راوی

تعریف

لغوی اعتبار سے مبہم، ابہام کا اسم مفعول ہے اور اس کا معنی ہے، غیر واضح چیز۔ اصطلاحی مفہوم میں مبہم اس راوی کو کہتے ہیں جس کا نام حدیث کی سند میں واضح طور پر بیان نہ کیا گیا ہو۔ بسا اوقات حدیث کے متن میں آنے والے کسی شخص کا نام بھی واضح طور پر بیان نہیں کیا گیا ہوتا۔ اسے بھی مبہم ہی کہا جاتا ہے۔

فوائد

اگر سند میں کسی راوی کے نام میں ابہام پایا جائے تو اسے معلوم کرنے کا فائدہ یہ ہوتا ہے کہ اس راوی کے ثقہ یا ضعیف ہونے کا علم ہو جاتا ہے جس کے نتیجے میں حدیث کے صحیح یا ضعیف ہونے کا فیصلہ کیا جا سکتا ہے۔

††††††††† (بعض اوقات حدیث کے متن میں کوئی واقعہ بیان کیا گیا ہوتا ہے یا ویسے ہی کسی شخص کا تذکرہ کیا گیا ہوتا ہے لیکن اس کا نام مبہم ہوتا ہے۔) ایسی صورت میں اس ابہام کو دور کرنے کا فائدہ یہ ہوتا ہے کہ یہ معلوم ہو جاتا ہے کہ حدیث میں بیان کردہ کوئی واقعہ کس شخص سے متعلق ہے یا حدیث میں سوال کرنے والا شخص کون ہے یا اگر حدیث میں اس شخص کی تعریف یا مذمت کی گئی ہو تو اس شخص کا اچھا یا برا ہونا معلوم ہو جائے گا وغیرہ وغیرہ۔ متن میں ابہام دور کرنے سے جلیل القدر صحابہ رضی اللہ عنہم کے حالات کا علم ہوتا ہے۔

مبہم کو متعین کیسے کیا جا سکتا ہے؟

اگر وہی حدیث کسی اور سند سے بھی مروی ہو تو ممکن ہے کہ دوسری سند میں نام متعین طریقے سے لئے گئے ہوں۔ دوسرا طریقہ یہ ہے کہ سیرت کے ماہرین تحقیق کر کے اس شخص کے نام کا تعین کریں۔

مبہم کی اقسام

مبہم کو اس کے ابہام کی شدت کے اعتبار سے چار قسموں میں تقسیم کیا گیا ہے۔ ہم ان کا آغاز مبہم ترین سے کریں گے:

       کسی کا نام لینے کی بجائے اس کو مرد یا خاتون یا شخص کہہ کر ذکر کیا جائے: اس کی مثال سیدنا ابن عباس رضی اللہ عنہما کی حدیث ہے کہ "ایک شخص نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ واٰلہ وسلم سے پوچھا کہ کیا حج ہر سال کرنا فرض ہے؟" یہاں 'شخص' سے مراد 'الاقرع بن حابس' رضی اللہ عنہ ہیں۔

       کسی کا نام لینے کی بجائے بیٹا یا بیٹی کہہ کر اس کا ذکر کیا جائے: اسی میں بہن، بھائی، بھتیجا، بھتیجی، بھانجا، بھانجی کہہ کر بیان کرنا شامل ہے۔ اس کی مثال سیدہ ام عطیہ رضی اللہ عنہا کی حدیث ہے کہ انہوں نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ واٰلہ وسلم کی بیٹی (کی میت) کو پانی اور پتوں سے غسل دیا۔" یہاں بیٹی کا نام نہیں لیا گیا۔ اس سے مراد سیدہ زینب رضی اللہ عنہا ہیں۔

       کسی کا نام لینے کی بجائے اسے چچا یا پھوپھی کہا جائے: اسی میں ماموں، خالہ یا کزن بھی شامل ہیں۔ اس کی مثال سیدنا رافع بن خدیج رضی اللہ عنہ کی حدیث ہے جس میں انہوں نے اپنے چچا کا ذکر کیا ہے۔ ان کے چچا کا نام ظُھَیر بن رافع تھا۔اسی طرح سیدنا جابر رضی اللہ عنہ نے ایک حدیث میں اپنی پھوپھی کا ذکر کیا ہے۔ ان کا نام فاطمہ بنت عمرو تھا۔

       کسی کا نام لینے کی بجائے اسے خاوند یا بیوی کہہ کر پکارا جائے: اس کی مثال صحیحین کی حدیث ہے جس میں سیدہ سبیعۃ رضی اللہ عنہا کے خاوند کی وفات کا ذکر ہے۔ ان کے خاوند کا نام سعد بن خولہ تھا۔ اسی طرح سیدنا عبدالرحمٰن بن زبیر رضی اللہ عنہ کی زوجہ کا ذکر بھی کیا گیا ہے۔ ان کا نام تمیمۃ بنت وہب تھا۔

مشہور تصانیف

اس ضمن میں اہل علم جیسے عبدالغنی بن سعید، خطیب، اور نووی وغیرہ نے بہت سے کتابیں تصنیف کی ہیں۔ ان میں سب سے بہترین کتاب ولی الدین العراقی کی 'المستفاد من المبہمات المتن و الاسناد" ہے۔

سوالات اور اسائنمنٹ

مہمل اور مبہم راوی میں فرق بیان کیجیے۔

 

اگلا سبق†††††† ††††††††† ††††††††† ††††††††† ††††††††† فہرست††††††† ††††††††† ††††††††† ††††††††† ††††††††† پچھلا سبق

مصنف کی دیگر تحریریں

قرآنی عربی پروگرام/سفرنامہ ترکی/††مسلم دنیا اور ذہنی، فکری اور نفسیاتی غلامی/اسلام میں جسمانی و ذہنی غلامی کے انسداد کی تاریخ ††/تعمیر شخصیت پروگرام/قرآن اور بائبلکے دیس میں/علوم الحدیث: ایک تعارف ††/کتاب الرسالہ: امام شافعی کی اصول فقہ پر پہلی کتاب کا اردو ترجمہ و تلخیص/اسلام اور دور حاضر کی تبدیلیاں ††/ایڈورٹائزنگ کا اخلاقی پہلو سے جائزہ ††/الحاد جدید کے مغربی اور مسلم معاشروں پر اثرات ††/اسلام اور نسلی و قومی امتیاز ††/اپنی شخصیت اور کردار کی تعمیر کیسے کی جائے؟/مایوسی کا علاج کیوں کر ممکن ہے؟/دور جدید میں دعوت دین کا طریق کار ††/اسلام کا خطرہ: محض ایک وہم یا حقیقت/Quranic Concept of Human Life Cycle/Empirical Evidence of Godís Accountability

 

php hit counter