بِسمِ اللهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيمِ

Allah, in the name of, the Most Affectionate, the Eternally Merciful

Religion & Ethics

Dedicated to ethics, religious tolerance, peace and love for humanity

اخلاقیات اور مذہب

اعلی اخلاقی رویوں، مذہبی رواداری، امن اور انسانیت کی محبت سے وابستہ

اردو اور عربی تحریروںکو بہتر دیکھنے کے لئے نسخ اور نستعلیق فانٹ یہاں سے ڈاؤن لوڈ کیجیے

Home

اسلام میں ذہنی و جسمانی کے انسداد کی تاریخ

کتاب کوڈاؤن لوڈکرنے کے لئے یہاں کلک کیجیے (سائز 8MB)

حصہ ششم: اسلام اور غلامی سے متعلق جدید ذہن کے شبہات

Religion & Ethics

Personality Development

Islamic Studies

Quranic Arabic Learning

Adventure & Tourism

Risk Management

Your Questions & Comments

Urdu & Arabic Setup

About the Founder

باب 21: اسلام اور غلامی سے متعلق فلسفیانہ اور تاریخی سوالات

کیا وجہ ہے کہ مسلم تاریخ میں لونڈیوں کو کثرت سے سیکس کے لئے استعمال کیا گیا؟

یہ بھی مسلم تاریخ کا ایک بہت بڑا المیہ ہے کہ ان کے ہاں جب دین سے انحراف پیدا ہوا تو ان کے بادشاہ عیاشی کی طرف مائل ہوتے چلے گئے۔ اس عیاشی کا ایک پہلو یہ ہے کہ انہوں نے حرم تعمیر کرنا شروع کر دیے۔ یہ سلسلہ صرف ان بادشاہوں تک ہی محدود نہ رہا بلکہ آہستہ آہستہ اشرافیہ کے پورے طبقے نے اسے قبول کر لیا۔ مسلمانوں نے اس ضمن میں اپنے دین سے جو انحرافات کئے، وہ یہ تھے:

       ایک ایک فرد نے سینکڑوں ہزاروں کنیزوں کو اپنے حرم میں اکٹھا کرنا شروع کر دیا۔

       آزاد خواتین اور بچیوں کو قافلوں پر حملے کر کے لونڈی بنانے کا سلسلہ شروع کیا گیا۔

       مسلم ممالک میں لونڈیوں کی اس بڑھتی ہوئی ڈیمانڈ کے نیتجے میں غیر مسلم ممالک میں آزاد خواتین کو لونڈی بنانے کو فروغ نصیب ہوا۔

       لونڈیوں کو اپنے جسم کے ذریعے مرد کو تسخیر کرنے کی تربیت دینے کے لئے باقاعدہ ادارے قائم کیے گئے۔

یہ سب سلسلے یقیناً دین اسلام کی تعلیمات سے انحراف کے نتیجے میں پیدا ہوئے۔ جس طرح کسی عیسائی بادشاہ کی بدکاریوں کا ذمہ دار عیسائی مذہب کو قرار نہیں دیا جا سکتا، بدھ بادشاہ کی بدفعلیوں کا ذمہ دار بدھ مذہب نہیں ہو سکتا اور ہندو بادشاہ کے ظلم کا ذمہ دار ہندو مذہب نہیں ہو سکتا، بالکل اسی طرح کسی مسلمان بادشاہ کے افعال کا ذمہ دار اسلام کو قرار نہیں دیا جا سکتا۔

††††††††† یہاں یہ ضروری ہے کہ اس ظلم کے لئے اسلام کے مقدس نام کو جس طریقے سے استعمال کیا گیا ہے، اس کی تفصیلات بھی بیان کر دی جائیں۔ اسلام نے کسی خاتون سے ازدواجی تعلقات قائم کرنے کی صرف دو صورتوں کو جائز قرار دیا تھا۔ ایک صورت یہ ہے کہ کوئی خاتون اپنی مرضی سے قانونی طریقے سے کسی مرد کے ساتھ نکاح کا رشتہ قائم کرے۔

††††††††† دوسری صورت یہ تھی کہ کوئی خاتون لونڈی کی حیثیت سے مسلم معاشرے میں موجود ہو یا کسی بھی ایسی جنگ میں، جو ایک قانونی جہاد ہو (نہ کہ محض دولت اور زمین کے لالچ میں کی جانے والی جنگ ہو)، دشمن کی کوئی فوجی خاتون گرفتار ہو کر مسلم معاشرے میں آ جائے۔ اگر اس خاتون کو فدیہ لے کر یا احساناً رہا کرنے کی بھی کوئی صورت موجود نہ ہوتی تو اس خاتون کو مسلم معاشرے کا حصہ بنا دینے کے لئے حکومت اس کا رشتہ ایک نسبتاً کم درجے کی بیوی کے کسی مسلم مرد سے قائم کر دیا جاتا تھا۔ ہم باب 9 میں اس رشتے کے ایک ایک پہلو کو لے کر تفصیل سے یہ بیان کر چکے ہیں کہ اس رشتے میں اس خاتون کو کم و بیش وہی حقوق حاصل ہوا کرتے تھے جو کہ آزاد بیوی کو حاصل ہوتے ہیں۔

††††††††† فدیہ یا بطور احسان رہا نہ کرنے کی صورت بھی اسی وقت پیش آتی تھی جب اس خاتون کا خاوند، باپ یا بھائی میدان جنگ میں مارا گیا ہوتا تھا ورنہ اس دور میں دنیا کی ہر قوم اپنی خواتین کے معاملے میں بہت حساس تھی۔

††††††††† اس مرد کو دین نے یہی حکم دیا تھا کہ وہ اس خاتون کو اچھی تعلیم و تربیت کے بعد اسے مکمل آزاد کر کے اس سے اس کی مرضی نکاح کر لے۔ جب تک وہ خاتون 'ملک یمین' کی حیثیت سے اس مرد کے پاس ہے، وہ اس کی اجازت سے اس کے ساتھ ازدواجی تعلقات قائم کر سکتا تھا۔ بچہ ہونے کی صورت میں وہ خاتون خود بخود آزاد ہو جاتی تھی۔ اگر اس خاتون کو اپنا آقا پسند نہ آتا تو وہ فوری طور پر مکاتبت کے ذریعے اس سے نجات حاصل کر سکتی تھی۔ اسلام میں کسی اور طریقے سے کسی بھی خاتون کو لونڈی نہیں بنایا جا سکتا تھا۔

††††††††† ایک کم عقل شخص بھی یہ سمجھ سکتا ہے کہ آقا اور لونڈی کے اس رشتے کا مقصد یہی تھا کہ دشمن فوج کی بے سہارا فوجی خواتین کو ایک سہارا دے دیا جائے اور انہیں معاشرے میں جذب کر کے کچھ عرصے میں ایک آزاد خاتون کا درجہ دے دیا جائے۔ اگر اس طریقے پر عمل نہ کیا جاتا تو پھر اس خاتون کے پاس طوائف بننے کے سوا اور کوئی راستہ نہ ہوتا جس کے نتیجے میں مسلم معاشروں میں طوائفوں کا ایک بہت بڑا طبقہ وجود میں آ جاتا۔

††††††††† دنیا کے تمام مذاہب کے ماننے والوں میں ایسے لوگ رہے ہیں جو اپنے مذہب کے کسی بھی حکم کے اصل مقصد کو نظر انداز کر کے اس اجازت کا غلط استعمال شروع کر دیتے ہیں۔ دین میں شادی اور طلاق کی اجازت دی گئی ہے۔ مسلمانوں میں آج بھی ایسے لوگ موجود ہیں جو بدکاری کرنے کے لئے شام کو ایک خاتون سے نکاح کرتے ہیں اور صبح اسے طلاق دے دیتے ہیں۔

††††††††† اسلام میں یہ قانون موجود ہے کہ جو مال ایک سال تک کسی شخص کے پاس موجود رہے، وہ اس پر زکوۃ ادا کرے۔ بہت سے لوگ اس سے بچنے کے لئے گیارہویں مہینے، اس مال کو اپنی بیوی کے حوالے کر دیتے ہیں جو گیارہ ماہ کے بعد اسے واپس شوہر کو دے دیتی ہے۔ ایسے لوگ ہر معاشرے میں موجود ہوتے ہیں۔ مسلمانوں نے اس ضمن میں جو کچھ بھی کیا، وہ دین کی ایک اجازت کا غلط استعمال تھا، جس کے وہ خود ذمے دار ہوں گے۔ اسلام پر ایسے لوگوں کی بدفعلیوں کی کوئی ذمہ داری عائد نہیں ہوتی۔ وہ اپنی بدفعلیوں کے لئے اللہ تعالی کے ہاں جواب دہ ہوں گے۔

††††††††† اب آخری سوال یہ باقی رہ جاتا ہے کہ اسلام نے مسلم مردوں کو ایک سے زائد خواتین کے ساتھ قانونی ازدواجی تعلق رکھنے کی اجازت ہی کیوں دی ہے اور خواتینکو ایسی اجازت کیوں نہیں دی گئی؟ ظاہر ہے کہ ایسے دور میں جب جنگیں بکثرت ہوں اور ان جنگوں میں عام طور پر مرد ہی مارے جاتے ہوں، خواتین کی کفالت اور ان کی ازدواجی ضروریات کو پورا کرنے کا اس کے سوا اور کیا طریقہ ممکن تھا کہ مردوں کو ایک سے زائد شادیوں کی اجازت دے دی جائے۔ اگر ایسا نہ کیا جاتا تو عصمت فروشی کا ایک بہت بڑا ادارہ وجود میں آ جاتا۔

††††††††† موجودہ دور میں بھی پہلی اور دوسری جنگ عظیم کے بعد بدکاری کے پھیلنے کی بڑی وجہ یہی ہے کہ اہل مغرب کے ہاں دوسری شادی کو گناہ سمجھا جاتا ہے۔ یہ بدکاری صرف انہی خواتین تک محدود نہ رہی بلکہ موجودہ دور میں دو نسلوں کے بعد بھی ان کے ہاں سیکس سے متعلق جو غیر معتدل رویہ پایا جاتا ہے، اس کی وجہ بھی یہی ہے۔ عجیب بات یہ ہے کہ دوسری شادی کے خلاف تو ان کے ہاں ایک بہت بڑی تحریک پائی جاتی ہے مگر غیر قانونی ازدواجی تعلقات، جو اب ان کے ہاں عام معمول ہیں، وہ ان کے لئے کوئی مسئلہ ہی نہیں ہیں۔

††††††††† اسلام نے دوسری شادی کا کہیں حکم نہیں دیا ہے بلکہ صحیح یہ ہے کہ اس سے منع نہیں فرمایا۔ یہ بھی اس بات سے مشروط ہے کہ وہ شخص ان خواتین کے ساتھ مکمل انصاف کا سلوک کرے۔ اگر وہ ایسا نہیں کر سکتا تو اسے دوسری شادی کی اجازت نہیں ہے۔ ایسا کرنے کی صورت میں وہ آخرت میں بھی جواب دہ ہو گا اور دنیا میں بھی قانون اس کے خلاف کاروائی کر سکتا ہے۔

††††††††† رہی یہ بات کہ خواتین کو ایک سے زائد مردوں سے ازدواجی تعلقات کی اجازت کیوں نہیں دی گئی۔ اس کا جواب تو بہت واضح ہے۔ پہلی بات تو یہ ہے کہ جنگوں کے باعث مرد خواتین کی نسبت پہلے ہی تعداد کی کمی کا شکار تھے۔ دوسری اہم بات یہ ہے کہ خاتون کے ایسا کرنے کی صورت میں بچے کے باپ، اس کی کفالت اور وراثت کے مسائل کو کس طرح طے کیا جائے گا۔ اگر کسی خاتون کا شوہر اس کے ازدواجی حقوق پورا نہیں کرتا، تو اس کے لئے راستہ کھلا ہے کہ وہ جب چاہے خلع لے کر دوسری شادی کر لے۔

 

اگلا صفحہ††††††††††††††††††††††††††††††††††† فہرست†††††††††††††††††††††††††††††††††††† پچھلا صفحہ

اسلام میں جسمانی و ذہنی غلامی کا انسداد: ہوم پیج

فلسفیانہ سوالات

انسان، اپنے جیسے انسان کو غلام بنانا کیوں چاہتا ہے؟

کیا قرآن غلامی کو فطریقرار دیتا ہے؟

قرآن نے غلامی کو برائی قرار کیوں نہیں دیا؟

تاریخی سوالات

کیا اسلام نے غلامی کو باقاعدہ ایک سماجی ادارے کی شکل دی ہے؟

رسول اللہ صلی اللہ علیہ واٰلہ وسلم نے لوگوں کو اپنی ذاتی غلامی میں کیوں رکھا؟

اسلام نے غلامی کو ایک دم ختم کیوں نہیں کیا؟

اسلام نے غلاموں کی خرید و فروخت پر مکمل پابندی عائد کیوں نہیں کی؟

اسلامی تاریخ میں جنگی قیدیوں کو غلام کیوں بنایا گیا؟

عہد رسالت میں بنو قریظہ کو غلام کیوں بنایا گیا؟

کیا عہد رسالت میں چند غلاموں کی آزادی کو منسوخ کیا گیا تھا؟

کیا عہد رسالت میں ام ولد کی خدمات کو منتقل کیا جاتا تھا؟

کیا وجہ ہے کہ اسلام کی اصلاحات کے باوجود، مسلم تاریخ میں غلامی کا ادارہ بڑے پیمانے پر موجود رہا؟

کیا وجہ ہے کہ مسلم تاریخ میں لونڈیوں کو کثرت سے سیکس کے لئے استعمال کیا گیا؟

مسلم مصلحین نے امراء کے حرم اور خواجہ سرا پولیس کے اداروں کے خلاف مزاحمت کیوں نہیں کی؟

کیا وجہ ہے کہ مسلمانوں کے ہاں نفسیاتی غلامی بڑے پیمانے پر موجود رہی ہے؟

اس کی کیا وجہ ہے کہ بعض مستشرقین نے اسلام کو غلامی کا حامی قرار دیا ہے؟

غلامی کے خاتمے سے متعلق سوالات

کیا وجہ ہے کہ موجودہ دور میں غلامی کے خاتمے کی تحریک کا آغاز مسلمانوں کی بجائے اہل مغرب کی طرف سے ہوا؟

کیا وجہ ہے کہ مسلمانوں کے ہاں آزادی فکر کی تحریک اہل مغرب کی نسبت بہت کمزور ہے؟

کیا موجودہ دور میں مسلمان غلامی کے دوبارہ احیاء کے قائل ہیں؟

فقہی سوالات

فقہ سے متعلق چند بنیادی مباحث

موجودہ دور کے جنگی قیدیوں کے ساتھ کیا معاملہ کیا جائے؟

کیا غیر مسلم غلاموں کی آزادی بھی اسلام کے نزدیک نیکی ہے؟

مکاتبت واجب ہے یا مستحب؟

مکاتب غلام ہے یا آزاد؟

کیا اسلام میں غلام کو مال رکھنے کا حق حاصل ہے؟

کیا غلام کو بھی اسلام نے وراثت کا حق دیا ہے؟

کیا اسلام نے غلام کو گواہی دینے کا حق دیا ہے؟

کیا اسلام نے عرب اور عجم کے غلاموں میں فرق کیا ہے؟

کیا اسلام غلام کو شادی کرنے کا حق دیتا ہے؟

کیا اسلام موجودہ یا سابقہ غلام کو آزاد خاتون سے شادی کی اجازت دیتا ہے؟

کیا لونڈی کی اجازت کے بغیر عزل جائز ہے؟

کیا اسلام میں غلام کا فرار ہونا حرام ہے؟

کیا غلام کو قتل کرنے کی سزا بھی قتل ہے؟

"اما مناء او اما فداء" کی تفسیر کیا ہے؟

کیا غلام کے بچے بھی غلام ہی ہوں گے؟

 

مصنف کی دیگر تحریریں

قرآنی عربی پروگرام/سفرنامہ ترکی/††مسلم دنیا اور ذہنی، فکری اور نفسیاتی غلامی/اسلام میں جسمانی و ذہنی غلامی کے انسداد کی تاریخ ††/تعمیر شخصیت پروگرام/قرآن اور بائبلکے دیس میں/علوم الحدیث: ایک تعارف ††/کتاب الرسالہ: امام شافعی کی اصول فقہ پر پہلی کتاب کا اردو ترجمہ و تلخیص/اسلام اور دور حاضر کی تبدیلیاں ††/ایڈورٹائزنگ کا اخلاقی پہلو سے جائزہ ††/الحاد جدید کے مغربی اور مسلم معاشروں پر اثرات ††/اسلام اور نسلی و قومی امتیاز ††/اپنی شخصیت اور کردار کی تعمیر کیسے کی جائے؟/مایوسی کا علاج کیوں کر ممکن ہے؟/دور جدید میں دعوت دین کا طریق کار ††/اسلام کا خطرہ: محض ایک وہم یا حقیقت/Quranic Concept of Human Life Cycle/Empirical Evidence of Godís Accountability