-ansi-font-weight:normal'> اللہ کے نام سے شروع، جو بڑا مہربان ہے، جس کی شفقت ابدی ہے | تیری مانند کون ہے؟ | توحید خالص: اول | توحید خالص: دوم | خدا، انسان اور سائنس: حصہ اول | خدا، انسان اور سائنس حصہ دوم | خدا، انسان اور سائنس حصہ سوم | اصلی مومن | نماز اور گناہ | رمضان کا مہینہ: حاصل کیا کرنا ہے؟ | اللہ کا ذکر اور اطمینان قلب | حج و عمرہ کا اصل مقصد کیا ہے؟ | ایمان کی آزمائش | اور زمین اپنے رب کے نور سے چمک اٹھے گی! | کیا آخرت کا عقیدہ اپنے اندر معقولیت رکھتا ہے؟ | جنت کا مستحق کون ہے؟ | کیا آپ تیار ہیں؟ | میلا سووچ کا احتساب | ڈریم کروز | موبائل فون |

بِسمِ اللهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيمِ

Allah, in the name of, the Most Affectionate, the Eternally Merciful

Personality Development Program

Contribute to humanity by develop a God-oriented personality!!!

تعمیر شخصیت پروگرام

ایک خدا پرست شخصیت کی تعمیر کر کے انسانیت کی خدمت کیجیے!!!

اردو اور عربی تحریروں کو بہتر دیکھنے کے لئے نسخ اور نستعلیق فانٹ یہاں سے ڈاؤن لوڈ کیجیے

Home

نجات کا دارومدار کسی گروہ سے تعلق پر نہیں ہے

Download Printable Version

 

 

Click here for English Version

Religion & Ethics

Personality Development

Islamic Studies

Quranic Arabic Learning

Adventure & Tourism

Risk Management

Your Questions & Comments

Urdu & Arabic Setup

About the Founder

اللہ تعالی کا ارشاد ہے:

إِنَّ الَّذِينَ آمَنُوا وَالَّذِينَ هَادُوا وَالنَّصَارَى وَالصَّابِئِينَ مَنْ آمَنَ بِاللَّهِ وَالْيَوْمِ الآخِرِ وَعَمِلَ صَالِحاً فَلَهُمْ أَجْرُهُمْ عِنْدَ رَبِّهِمْ وَلا خَوْفٌ عَلَيْهِمْ وَلا هُمْ يَحْزَنُونَ۔ (البقرۃ 2: 62)

یقین جانو کہ جو لوگ اب ایمان لائے (یعنی مسلمان) یا وہ جو یہودی، عیسائی یا صابی ہوئے، جو بھی اللہ اور آخرت کے دن پر ایمان لائے گا اور نیک عمل کرے گا، اس کا اجر اس کے رب کے پاس ہے۔ اسے نہ تو (مستقبل کے) اندیشے لاحق ہوں گے اور نہ ہی (ماضی کے) پچھتاوے۔

کسی قوم سے تعلق رکھنا ایک فطری سی بات ہے مگر انتہا درجے کی قوم پرستی ہر قسم کے تعصب کی بنیاد ہے۔ انسان جب کسی قوم سے تعلق رکھتا ہے تو وہ اس کے بارے میں ایک خاص قسم کے تعصب میں مبتلا ہو جاتا ہے۔ آج کے دور میں مسلمان یہ سمجھتے ہیں کہ جنت صرف انہی کے لئے ہے اور باقی سب قومیں جہنم میں جائیں گی۔ کچھ ایسا ہی تصور دیگر اقوام کا اپنے متعلق ہے۔

ہمارے ہاں بہت سے لوگ دعوت دین کو اپنا مقصد حیات بنا لیتے ہیں۔ دعوت دین ایک نہایت ہی اہم کام ہے لیکن اسے کرنے کے لئے چند صلاحیتیں درکار ہیں۔ دعوت دین کا کام بڑا ہی نازک ہے۔ اس کام کو کیسے کیا جائے؟ اس کے لئے یہاں کلک کیجیے۔

قرآن مجید کا نقطہ نظر اس سے بالکل مختلف ہے۔ اللہ تعالی کے نزدیک کسی ایک قوم کا فرد ہونے کا نجات سے کوئی تعلق نہیں۔ نجات کا معیار (Criteria) بالکل مختلف ہے۔ اللہ تعالی کے ہاں ہماری نجات اس بات پر نہیں ہو گی کہ ہم خود کو مسلمان، یہودی، عیسائی، صابی، ہندو، سکھ، یا بدھ کہتے ہیں۔ نجات اس بات پر ہو گی ہم خدا پر ایمان لائیں اور اس کے سامنے جواب دہی کو یاد رکھیں۔ دنیا میں نیک اعمال کرتے ہوئے اپنی زندگی ایک خدا پرست انسان کے طور پر بسر کریں۔

بعض لوگوں نے اس آیت سے ایک غلط فلسفہ اخذ کیا ہے کہ چونکہ یہاں اللہ کے پیغمبروں پر ایمان لانے کا ذکر نہیں ہے اس لئے یہ کچھ ضروری نہیں ہے۔ یہ ایک غلط تصور ہے۔ اللہ کے رسولوں پر ایمان لانا اور جانتے بوجھتے ان کا انکار نہ کرنا اللہ پر ایمان لانے اور نیک عمل کرنے کا ہی ایک حصہ ہے۔

جیسے کوئی شخص اللہ اور آخرت پر ایمان رکھتے ہوئے کسی دوسرے شخص کو قتل کر دے تو وہ سزا کا مستحق ہے اسی طرح جو شخص جانتے بوجھتے اللہ کے کسی ایک پیغمبر کا بھی انکار کر دے، وہ بھی اسی طرح ایک بڑے جرم کا مرتکب ہوتا ہے جس کی سزا اسے بھگتنا ہو گی۔

جو شخص زیادہ دولت اور لمبی عمر کا خواہش مند ہو، اسے چاہیے کہ وہ اپنے رشتے داروں سے تعلقات اچھے رکھے۔ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم (بخاری، کتاب الادب)

اللہ کے رسول جب بھی اس کے دین کی دعوت دیتے رہے، اس کے نتیجے میں جو لوگ ان پر ایمان لائے، وہ ہر طرح کے تعصب سے پاک ہو کر خالص ایمان اور عمل صالح کی بنیاد پر اپنی شخصیت کی تعمیر کرتے رہے۔ چند نسلوں کے بعد یہ لوگ قوم کی شکل اختیار کر جاتے۔ قرآن مجید ان گروہ بندیوں سے بالاتر ہو کر خالص ایمان اور عمل صالح ہی کو نجات کا معیار قرار دیتا ہے۔

نجات کیا ہے؟ اس دنیا کی زندگی میں انسان کو کتنی ہی نعمتیں میسر کیوں نہ ہوں، اس کا پیچھا دو چیزوں سے نہیں چھوٹ سکتا: ایک ماضی کے پچھتاوے اور دوسرا مستقبل کے اندیشے۔ اللہ تعالی یہ بیان کرتا ہے کہ آخرت کی زندگی میں نجات پانے کے بعد انسان کو ان دونوں سے نجات مل جائے گی۔ کتنا خوش نصیب ہے وہ شخص جسے یہ نعمت حاصل ہو گئی اور کتنا بدنصیب ہو گا وہ شخص جسے ابدی زندگی میں بھی ماضی کے پچھتاوے اور مستقبل کے اندیشے گھیرے رہیں گے!!!!

(مصنف: محمد مبشر نذیر)

اپنے دوستوں اور رشتے داروں کو اچھی تحریریں پڑھنے کے لئے دینا ایک اچھا کام ہے۔ آپ کی مثبت تنقید سے اس تحریر کو بہتر کیا جا سکتا ہے۔ ای میل کیجیے۔

mubashirnazir100@gmail.com

غور فرمائیے!

      لوگ محض کسی گروہ یا قوم سے تعلق ہی کو نجات کی بنیاد کیوں سمجھ بیٹھتے ہیں؟

      اپنی شخصیت کو تعصب سے پاک کرنے کا طریقہ بیان کیجیے۔

اپنے جوابات بذریعہ ای میل اردو یا انگریزی میں ارسال فرمائیے تاکہ انہیں اس ویب پیج پر شائع کیا جا سکے۔

 

 

 

 

یونٹ 1: اللہ اور رسول کے ساتھ تعلق

تعمیر شخصیت پروگرام کا تعارف |