بِسمِ اللهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيمِ

Allah, in the name of, the Most Affectionate, the Eternally Merciful

Personality Development Program

Contribute to humanity by developing a God-oriented personality!!!

تعمیر شخصیت پروگرام

ایک خدا پرست شخصیت کی تعمیر کر کے انسانیت کی خدمت کیجیے!!!

اردو اور عربی تحریروں کو بہتر دیکھنے کے لئے نسخ اور نستعلیق فانٹ یہاں سے ڈاؤن لوڈ کیجیے

Home

بدگمانی کے موضوع پر ایک ورکشاپ

 

 

 

Click here for English Version

 

پی ڈی ایف فارمیٹ میں تحریر ڈاؤن لوڈ کیجیے۔

 

Religion & Ethics

Personality Development

Islamic Studies

Quranic Arabic Learning

Adventure & Tourism

Risk Management

Your Questions & Comments

Urdu & Arabic Setup

About the Founder

ٹائٹل کی آیت: اے ایمان والو ! بہت سے گمانوں سے بچو کیونکہ بعض گمان صریح گناہ ہوتے ہیں۔(الحجرات۔۴۹:۱۲)

ٹائٹل کی حدیث: ابو ہریرہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ نبی کریم ﷺنے فرمایا کہ تم بد گمانی سے بچو اس لئے کہ بدگمانی سب سے زیادہ جھوٹی بات ہے۔اور کسی کے عیوب کی جستجو نہ کرو اور نہ اس کی ٹوہ میں لگے رہو۔۔(بخاری ، جلد سوم:حدیث ۱۰۰۴)

کیس اسٹدی: ایک محلے میں ایک عورت آکر بسی ۔ وہ اکیلی رہتی تھی۔لیکن وہ ہمیشہ بہت باریک ریشم کا لباس پہنتی ، بہت تیز خوشبو کا استعمال کرتی اور اکثر چہرے پر پاؤڈر لگاکے رکھتی تھی۔وہ جب بھی باہر نکلتی تو محور نگاہ ہوتی۔ اسکے گھر کے سامنے نئے ماڈل کی گاڑیا ں آکر رکتیں جن میں مرد حضرات اور بعض اوقات خواتین بھی آتیں۔ محلے میں کوئی اس سے تعلق نہ رکھتاتھا۔محلے والے چہ مہ گوئیاں کرتے اور اشاروں کنایوں سے اس عورت کے بارے میں اپنی بد گمانی کا اظہار کرتے۔

سوالات

۱۔یہ عورت کون ہے؟

۲۔اسلامی نقطہ نگاہ سے اس کے بارے میں کیا رائے رکھی جائے؟

۳۔کیا اس کے بارے میں محلے والوں کی رائے گناہ ہے؟

یہ جاننے کے لئے درج ذیل مضمون کو پڑھیں اور بدگمانی سے بچیں۔

گمان کا مفہوم

گمان سے مراد کسی فرد یا شے کے بارے میں اندازہ لگانا اورکوئی ابتدائی رائے قائم کرنا ہے۔ گمان کرنے کی اپنی ایک اہمیت ہے۔ مثال کے طور پر یہ ظن اور تخمین ہی سائنسی دریافتو ں کا سبب بنتا، عدالتی کاروائی میں معاون ہوتا اور معاشرتی امور میں مدد فراہم کرتا ہے۔ لیکن گمان اس وقت تک کار آمد ہے جب تک علم کامل نہ ہوجائے۔مثال کے طور پر پہلے انسان کا گمان یا اندازہ تھا کہ زمین مرکز کائنات ہے لیکن گلیلیو کی دریافت نے بتایا کہ زمین تو سورج کے گرد محو گردش ہے۔ اس سے یہ غلط گمان دور ہوگیا۔ اس کا مطلب یہ ہے کہ گمان اس وقت تک اہم ہے جب تک کہ اس کا پورا علم نہ حاصل کرلیا جائے۔اگر علم کامل ہوجائے تو یہی گمان یقین میں بدل جاتا ہے یا پھر رد ہوجاتا ہے۔

کیس کا دوسرا حصہ

ایک دن وہ عورت کئی دنوں سے باہر سودا لینے نہیں آئی تو لوگوں کو تشویش ہوئی۔ایک پڑوسن ہمت کرکے اس کے گھر پہنچ گئی، وہ بیمار تھی۔ پوچھنے پر اس عورت نے بتایا کہ وہ درحقیقت جلد کی بیماری میں مبتلا تھی اس لئے وہ باریک ریشم کے کپڑے پہنتی ، بدبو سے بچنے کے لئے خوشبو لگاتی تھی۔ وہ جو گاڑیاں آکر رکتی تھیں وہ سب اسکے امیر بہن بھائی تھے جو اس کا حال احوال پوچھنے آتے تھے۔

یہاں آپ دیکھیں کہ جیسے ہی آپ کا علم مکمل ہوا ، آپ کا گمان یا بدگمانی ختم ہوگئی اور اسکی جگہ یقین نے لے لی۔

کثرت گمان کا مفہوم

کثرتِ گمان کا مطلب لوگوں کے قول فعل یا اشیاء کے بارے میں بہت زیادہ اندازے لگانا اور وہم کی بنیاد پر رائے قائم کرنا کی عادت ڈالنا ہے۔اس عادت کے نتیجے میں ایسے گمان پیدا ہونے کا بھی اندیشہ ہے جو معاشرتی فساد کا سبب بنے یا وہ اپنی ذات میں گناہ ہو ۔بہت زیادہ گمان کرنے سے روکنے کی وجہ مسلمان معاشرے کو توہمات سے بچانا، نفرتیں ختم کرنا اور باہمی اخوت و بھائی چارے کو فروغ دینا ہے۔

اچھا گمان رکھنا

گمان کلیتاََ حرام نہیں بلکہ صرف وہ گمان ممنوع ہے جو گناہ ہو یا گناہ کا سبب بنے۔مثال کے طور پر کسی اجنبی سے مل کر یہ گمان رکھنا کہ یہ نیک ہی ہوگا۔یا راہ چلتے ہوئے کوئی دھکا لگنے پر یہ سمجھنا کہ غلطی سے ہوگیا ہوگا یہ خوش گمانی ہے۔

حدیث: حضرت ابوہریرہ رضی اللہ تعالیٰ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا اللہ رب العزت فرماتا ہے میں اپنے بندوں کے گمان کے مطابق ان سے معاملہ کرتا ہوں جب وہ مجھے یاد کرتا ہے تو میں اس کے ساتھ ہوتا ہوں اگر وہ اپنے دل میں مجھے یاد کرتا ہے تو میں بھی اسے اپنے دل میں یاد کرتا ہوں اور اگر وہ مجھے کسی گروہ میں یاد کرتا ہے تو میں بھی اسے ایسی جماعت میں یاد کرتا ہوں جو ان سے بہتر ہے اور اگر وہ ایک ہاتھ میرے قریب ہوتا ہے تو میں چار ہاتھ اس کے قریب ہوتا ہوں اور اگر وہ میری طرف چل کر آتا ہے تو میں (میری رحمت) اس کی طرف دوڑ کر آتا ہوں۔ [صحیح مسلم:جلد سوم:حدیث نمبر 2308]

بدگمانی کا مفہوم

اس سے مراد کسی فرد یا شے کے بارے میں کوئی ایسی منفی رائے یا اندازہ قائم کرنا جس سے اخوت اور بھائی چارہ پر اثر پڑے۔

بدگمانی کرنے کے اسالیب

کسی کے بارے میں اندازہ اس کے قول یا فعل سے لگایا جاتا ہے۔چنانچہ بدگمانی کے بھی یہی اسالیب ہیں

۱۔کسی کی باتوں کا غلط مفہوم اخذ کرنا جیسے کسی نے کہا کہ احمد بہت اچھا انسان ہے ۔تو آپ نے سمجھا کہ شاید یہ مجھے برا انسان سمجھتا ہے۔

۲۔ کسی کے چہرے مہرے یا با ڈی لینگویج سے اندازے لگانا مثلاََ کسی کی کرخت شکل دیکھ کر یہ سمجھنا کہ کہ ضرور جرائم پیشہ ہوگا۔

۳۔کسی کے فعل کو غلط طور پر لینا جیسے کوئی شخص اذان سن کر بیٹھا رہا اور آپ نے یہ گمان کرلیا کہ وہ بے نمازی ہے۔یا جیسے کسی شخص نے آپ کی بات کا جواب نہ دیا تو آپ نے گمان کیا کہ یہ مغرور ہے۔

۴۔ کوئی قیمتی چیز (مثلاََ سونے کی چین) رکھ کر بھول جانا اور پھر کام کرنے والی ملازمہ پر شک کرنا

۵۔ ساس کا بہو اور بہو کا ساس کو اپنا دشمن سمجھنا

۶۔مذہبی لوگوں کا مخالفین کو کافر، منافق، بدنیت سمجھنا

۷۔ توہمات پر یقین کرنا جیسے ہاتھ کی لکیروں یا ستاروں کی چالوں سے زندگی کے معاملات طے کرنا

بدگمانی کے اسباب

۱۔ادھورا علم: یہ گمان کی وجہ اور بدگمانی کا بنیادی سبب ہے۔جیسے ایک شفیق خدا کو دشمن گرداننا۔ اسکی بنیادی وجہ خدا کی شفقت کا ادراک نہ ہونا ہے۔

۲۔منفی سوچ: اس کا مطلب کسی بات کے منفی پہلو کو مثبت پر ترجیح دینے اور مایوس ہونے کی عادت ہے ۔مثال کے طور پر ساس کا مہربان رویہ دیکھ کر یہ سوچنا کہ ضرور دال میں کچھ کالا ہے۔

۳۔غلط فہمی: جیسے دور ڈبل سواری پر آنے والے دو شریف لڑکوں کو ڈاکو سمجھ لینا۔

۴۔کسی متعین شخص سے نفرت یا شکایت: جیسے ہندؤوں یا یہودیوں کو ظالم ، بددیانت اور سازشی سمجھنا

۵۔ ماضی کا تجربہ :کسی پولیس والے کی زیادتی کی بنا پر پولیس کے محکمے کو ظالم خیال کرنا

۶۔ عدم تحفظ کا احساس: اندھیرے میں بھوت پریت کو محسوس کرنا

۷۔ انسانی یا جناتی شیطان کی وسوسہ انگیزی: کسی کے بہکاوے میں آکر بدگمانی کا شکار ہوجانا

بدگمانی کے نقصانات

۱۔ نفسیاتی بیماریاں ۲۔ باہمی نفرتیں ، رنجشیں، رقابتیں ۳۔معاشرے میں انتشار ۴۔لڑائی جھگڑا اور قتال ۵۔ خاندانی ، قبائلی، لسانی اور اداروں کی رقابتیں

بدگمانی کا علاج

۱۔اگر مسئلہ اہم ہے تو معلومات میں اضافہ کر کے گمان کو خاتمہ کردیں۔

۲۔دوسروں کے متعلق بہت زیادہ سوچنے اور بلاوجہ رائے قائم کرنے سے گریز کریں

۳۔ اپنی منفی سوچوں پر قابو رکھیں اور کسی بھی ناخوشگوار خیال پر گرفت کریں۔

۴۔ اگر کسی کے خلاف کوئی بدگمانی پیدا ہو جائے تو آخری حد تک بدگمانی سے جنگ لڑیں۔ مثال کے طور پر کسی شخص نے آپ سے بد تمیزی سے بات کی اور آپ نے یہ سوچا کہ شاید یہ یہ میرا دشمن ہے۔ تو یہ گمان کریں کہ وہ میرا دشمن نہیں اور ممکن ہے وہ کسی گھریلو پریشانی میں الجھا ہوا ہو جس کی بنا پر وہ لڑا ہو۔

۴۔ اپنا حق لوگوں کے لئے چھوڑنا شروع کریں۔

۵۔ لوگوں کو انکی غلطی پر معاف کرنا سیکھیں کیونکہ اگر غلطی آپ کی ہے تو معا فی کیسی؟

۶۔ یہ ایک دن کا کام نہیں۔ لہٰذا ناکامی کی صورت میں کوشش جاری رکھیں۔

غور فرمائیے!

سوال نمبر۱: برطانیہ میں صبح جب لوگ اپنے دفتر جاتے ہوئے سگنل پر گاڑی روکتے ہیں تو خیر سگالی کے طور پرایک دوسرے کو مسکر ا کر دیکھتے ہیں۔ اگر پاکستان میں ایسا ہو تو لوگ عام طور پر کیا سمجھیں گے؟

سوال نمبر۲: نوجوان لڑکا اور لڑکی اسکوٹر پر بیٹھ کر جارہے ہیں۔ انہیں دیکھ کر با لعموم لوگ کیا سوچتے ہیں اور کیا سوچنا چاہئے؟

سوال نمبر۳: افضل نے گھر کی بیل بجائی، اندر سے ایک بچہ باہر آیا اور بولا ، ابو گھر پر نہیں ہیں۔ حالانکہ ابو کی گاڑی باہر کھڑی تھی۔ افضل کا گمان کیا ہونا چاہئے۔

سوال نمبر ۴: ٹیچر نے کلاس لینا شروع کی۔اچانک محسوس ہو ا کہ ایک لڑکا مسلسل آنکھ کو اس طرح حرکت دے رہا ہے جیسے وہ آنکھ مار رہا ہو۔ ٹیچر کو غصہ آیا اور اس نے لڑکے کو باہر نکال دیا۔ بعد میں لڑکے نے بتایا اسکی دائیں آنکھ کا پپوٹا خراب ہے اور یہ مسلسل حرکت میں رہتا ہے۔ ٹیچر نے ساری کہا۔ اس کیس میں کیا ٹیچر کا رویہ درست تھا؟

سوال نمبر۵: آپ کا اسٹار کیا ہے؟ کیا آپ اسٹارز اور ہاتھ کی لکیروں وغیرہ پر یقین رکھتے ہیں؟ ہماری سوسائٹی کے کوئی پانچ توہمات بیان کریں۔

سوال نمبر ۶: کزن میرج سے ایب نارمل بچہ پیدا ہونے کے امکانات بڑھ جاتے ہیں۔ کیا یہ مانناتوہما ت میں آتا ہے؟

سوال نمبر ۷۔ کیا دو بھائیوں کو بے دردی کے ساتھ قتل کیا گیا اس میں بدگمانی بھی شامل تھی کہ وہ ڈاکو ہیں؟

سوال و جواب

مندرجہ ذیل میں درست جواب پر نشان لگائیے۔

کیس اسٹڈی: غزالہ اپنے کمرے سے باہر نکلی تو اچانک ساتھ والے کمرے میں ساس کی سرگوشیوں کی آواز آئی۔ وہ اپنے شوہر سے باتیں کررہی تھیں۔ غزالہ کے کان کھڑے ہوگئے ضرور میرے خلاف باتیں ہورہی ہیں ۔اس نے سوچا ۔ وہ دروازے کی اوٹ میں کھڑی ہوگئی اور باتیں سننے لگی۔ یہ لڑکی تو پاگل ہوگئی ہے، یہ چاہتی ہے کہ اپنے شوہر کو لے کر الگ ہو جائے۔ اس کی ساس نے کہا۔ غزالہ کا غصے کے مارے برا حال ہوگیا۔ وہ دوبارہ اپنے کمرے میں داخل ہوئی اور اپنے شوہر پر برس پڑی۔ شوہر نے اسے سمجھانے کی کوشش کی لیکن غزالہ کسی طور بات سننے کو تیا ر نہ تھی۔چنانچہ شوہر نے بھی اسے کچھ سنادیا اور بات بڑھ گئی۔ اس نے اپنی کپڑوں کی اٹیچی تیار کی اور اپنی ماں کے گھر جاکے بیٹھ گئی۔ شوہر نے اس جھگڑے کا ذکر اپنی ماں سے نہ کیا اور غزالہ کے گھر سے جانے کا کوئی بہانہ کردیا۔ ایک ہفتے کے بعد معاملات میں بہتری آئی اور غزالہ اپنے سسرال واپس آگئی۔ اگلے دن سا س سے باتیں کررہی تھی کہ اچانک ساس نے پوچھا! کیا تمہیں اپنی نند کے لچھن کا علم ہے ؟غزالہ نے نفی میں جواب دیا۔ ساس بولی۔ وہ سسرال سے الگ ہونا چاہتی ہے حالانکہ اسکے شوہر کی اتنی آمدنی نہیں کہ وہ گذارا کر سکے، یہی بات میں نے اس کے ابا کو بھی کہی تھی لیکن ہماری بیٹی ہماری تو سنتی ہی نہیں تم ہی اسے ا سمجھاؤ ۔ غزالہ اپنی ساس کی شکل دیکھتی رہ گئی، وہ بات جو اس نے اپنے متعلق سمجھی، وہ کسی اور کی تھی۔

ا۔ اس کیس میں بدگمانی کا مرتکب کون تھا۔(۱۔غزالہ ۲۔ اسکا شوہر ۳۔ساس ۴۔سسر)

2۔اس کیس میں بدگمانی کا اصل سبب کیا تھا(۱۔ساس سسر کی باتیں کرنا ۲۔ بات کا ادھورا سننا ۳۔ساس سے نفرت ۴ ۔ ان میں سے کوئی نہیں)

3۔بدگمانی کی بنیادی وجہ کیا ہے؟ (۱۔علم کی کمی ۲۔علم کی زیادتی ۳۔محبت ۴۔ ان میں سے کوئی نہیں)

4۔ سور ہ حجرات کی اس آیت میں کس سے منع کیا گیا ہے( ۱۔گمان کرنے سے ۲۔بدگمانی سے ۳۔ کثرت گمان سے ۴۔ان سب سے)

5۔ نبی کریم ﷺ نور تھے بشر نہیں ۔ یہ سمجھنا کیا ہے (۱۔غلط فہمی ۲۔بدگمانی ۳۔کثرت گمان ۴۔خوش گمانی)

6۔ بیوی نے میاں کے مسلسل دفتردیر سے آنے پر سمجھا کہ کوئی چکر ہے ۔اس کا حل کیا ہے (۱۔ شوہر سے پوچھ لینا ۲۔ ٹوہ لینا ۳۔انتقاماََخود بھی چکر چلالینا )

7۔ دوسرے مسالک سے تعلق رکھنے والے علماء کو ان کے مخالفین کافر، فاسق، بدعتی جیسے القاب سے یاد کرتے ہیں۔ اس کا سبب کیا ہو سکتا ہے (۱۔بدگمانی ۲۔نفرت ۳۔غلط فہمی ۴۔ان میں سے کوئی بھی یا تمام ایک ساتھ)

8۔ ایک لڑکے کا کسی لڑکی کو مسکراتے دیکھ کر یہ سمجھنا کہ وہ محبت کرتی ہے کیا ہوسکتا ہے(۱۔ گمان ۲۔بے وقوفی ۳۔ خوش فہمی ۴۔تینوں )

9۔جو ہانڈی کو چاٹ لے تو اسکی شادی میں بارش ہوتی ہے ۔ ایسا سمجھنے کی بنیادی وجہ کیا ہے۔( ا۔حماقت ۲۔توہم پرستی)

10۔ جنت اور دوزخ کو ماننا کیسا ہے( ۱۔ گمان ۲۔یقینی علم ۳۔ خوش فہمی)

(پروفیسر محمد عقیل)

اگر آپ کو یہ تحریر پسند آئی ہے تو اس کا لنک دوسرے دوستوں کو بھی بھیجیے۔ اپنے سوالات، تاثرات اور تنقید کے لئے بلاتکلف ای میل کیجیے۔ mubashirnazir100@gmail.com

 

 

یونٹ 1: اللہ اور رسول کے ساتھ تعلق

تعمیر شخصیت پروگرام کا تعارف | اللہ کے نام سے شروع، جو بڑا مہربان ہے، جس کی شفقت ابدی ہے | تیری مانند کون ہے؟ | توحید خالص: اول | توحید خالص: دوم | خدا، انسان اور سائنس: حصہ اول | خدا، انسان اور سائنس حصہ دوم | خدا، انسان اور سائنس حصہ سوم | اصلی مومن | نماز اور گناہ | رمضان کا مہینہ: حاصل کیا کرنا ہے؟ | اللہ کا ذکر اور اطمینان قلب | حج و عمرہ کا اصل مقصد کیا ہے؟ | ایمان کی آزمائش | اور زمین اپنے رب کے نور سے چمک اٹھے گی! | کیا آخرت کا عقیدہ اپنے اندر معقولیت رکھتا ہے؟ | جنت کا مستحق کون ہے؟ | کیا آپ تیار ہیں؟ | میلا سووچ کا احتساب | ڈریم کروز | موبائل فون | خزانے کا نقشہ | دین کا بنیادی مقدمہ: بعث و نشر | رسول اللہ صلی اللہ علیہ واٰلہ وسلم کی محبت | منصب رسالت سے متعلق چار بنیادی غلط فہمیاں | لو لاک یا رسول اللہ! | درود شریف | رحمۃ للعالمین: رحمت محمدی کا ایک پہلو | حضور کی سچائی اور ہماری ذمہ داری | رسول اللہ صلی اللہ علیہ واٰلہ وسلم کا ادب | دین میں تحریف اور بدعت کے اسباب

یونٹ 2: منفی شخصیت سے نجات

سطحی زندگی | کامیاب زندگی | یہ کیسی بری قناعت ہے! | مسئلہ شفاعت | نجات کا دارومدار کسی گروہ سے تعلق پر نہیں ہے | کردار نہ کہ موروثی تعلق | اختلاف رائے کی صورت میں ہمارا رویہ | اسلام اور نفسیاتی و فکری آزادی | مسلم دنیا میں ذہنی، نفسیاتی اور فکری غلامی کا ارتقاء | مذہبی برین واشنگ اور ذہنی غلامی | نفسیاتی، فکری اور ذہنی غلامی کا سدباب کیسے کیا جا سکتا ہے؟ | دین اور عقل | دنیا کے ہوشیار | تنقید | ریاکاری اور مذہبی لوگ | دوغلا رویہ | اصول پسندی | بنی اسرائیل کے مذہبی راہنماؤں کا کردار | فارم اور اسپرٹ | دو چہرے، ایک رویہ | عیسائی اور مسلم تاریخ میں حیرت انگیز مشابہت | شیخ الاسلام | کام یا نام | ہماری مذہبیت | نافرمانی کی دو بنیادیں | ہماری دینی فکر کی غلطی اور کرنے کا کام | ٹرانسپیرنسی انٹرنیشنل کی رپورٹ اور ایک حدیث | آرنلڈ شیوازنگر کا سبق | آج کے بے ایمان | نئی بوتل اور پرانی شراب | جدید نسل | بے وقوف کون؟ | غیبت | شبہات | بدگمانی اور تجسس | لکھ لیا کرو | عذر یا اعتراف | کبر و غرور اور علماء | دھوکے میں مبتلا افراد کی اقسام | برائی کی جڑ | تکبر اور بہادری میں فرق | اپنی خامی | مسلمان وہ ہے | تمسخر | منیٰ کا سانحہ: دنیاکو کیا پیغام دے گیا؟ | عافیت کا راستہ | انتہا پسندی اور اعتدال پسندی کا فرق | کیا رہبانیت انتہا پسندی ہے؟ | ایف آئی آر | لیجیے انقلاب آ گیا | 18 اکتوبر کے سبق | مسجد قرطبہ اور مسجد اقصی | جادو | وجود زن کے مصنوعی رنگ | فحش سائٹس اور ہمارے نوجوان | سیکس کے بارے میں متضاد رویے | ہم جنس پرستی | عفت و عصمت | مغرب کی نقالی کا انجام | جذبہ حسد اور جدید امتحانی طریق کار | ساس اور بہو کا مسئلہ | یہ خوش اخلاقی | کسل مندی اور سستی پر قابو کیسے پایا جائے؟ | کیا آپ اپنے بیوی بچوں کو اپنے ہاتھوں قتل کر رہے ہیں؟

یونٹ 3: مثبت شخصیت کی تعمیر

نیکی کیا ہے؟ | پہاڑی کا وعظ | شیطانی قوتوں کا مقابلہ کیسے کیا جائے؟ | ذکر، شکر، صبر اور نماز | تعمیر شخصیت کا قرآنی لائحہ عمل | نظام تربیت کا انتخاب | مسجد کا ماحول | خود آگہی اور SWOT Analysis | اپنی کوشش سے | الحمد للہ رب العالمین | لکھ کر سوچنے والے | اعتراف | کامیابی کیا ہے؟ ایک کامیاب انسان کی کیا خصوصیات ہیں؟ | صحیح سبق | زہریلا نشہ | میں کیا کروں؟ | اپنے آپ کو پہچانیے | غربت کا خاتمہ کس طرح ہوتا ہے؟ | نور جہاں اور ارجمند بانو | سڑک بند ہے | مثبت طرز عمل ہی زندگی کی علامت ہے! | مزاج کی اہمیت | اور تالہ کھل گیا؟ | اپنا چراغ جلا لیں | دو قسم کی مکھیاں | پازیٹو کرکٹ | نرم دل

محبت و نفرت | فرشتے، جانور اور انسان | غصے کو کیسے کنٹرول کیا جائے | اعتبار پیدا کیجیے! | بڑی بی کا مسئلہ | وسعت نظری | سبز یا نیلا؟؟؟ | دین کا مطالعہ معروضی طریقے پر کیجیے | روایتی ذہن | کامیابی کے راز | تخلیقی صلاحیتیں | اسی خرچ سے | خوبصورتی اور زیب و زینت | بخل و اسراف | احساس برتری و احساس کمتری | قانون کا احترام | امن اور اقتصادی ترقی | موجودہ دور میں جہاد کیسے کیا جائے؟ | فیصلہ تیرے ہاتھوں میں ہے | لوز لوز سچویشن Loose Loose Situation | یہی بہتر ہے | رسول اللہ صلی اللہ علیہ واٰلہ وسلم کی علم سے محبت | وحی اور عقل کا باہمی تعلق (حصہ اول) | وحی اور عقل کا باہمی تعلق (حصہ دوم) | انسان اور حیوان | واقفیت کی کمی | صحافت اور فکری راہنمائی | نئی طاقت جاگ اٹھی | انسان اور جانور کا فرق | Idiot Box

یونٹ 4: انسانوں سے تعلق

انسانی حقوق: اسلام اور مغرب کا تقابلی جائزہ | اسلام اور غیر مسلم اقوام | غیر مسلموں کے ساتھ ہمارا رویہ | ہماری دلچسپی | ایک پاکستانی | بنی اسرائیل سے اللہ کا عہد | غلطی کرنے والے کے ساتھ کیا سلوک کرنا چاہیے؟ | دوسروں سے غلطی کی توقع رکھیے! | سب کا فائدہ | حضرت ایوب علیہ الصلوۃ والسلام کی معیت کا شرف | مہربانی کی مہک | دہی کے 1,000,000 ڈبے | عظمت والدین کا قرآنی تصور | تخلیق کے عمل کے دوران والدین کا رویہ | شیر خوار بچے کی تربیت کیسے کی جائے؟ | گفتگو کرنے والے بچے کی تربیت کیسے کی جائے؟ | بچوں کو نماز کی عادت کیسے ڈالی جائے؟ | بچوں میں شرم و حیا کیسے پیدا کی جائے؟ | برائی میں مبتلا بچوں سے کیسا رویہ رکھا جائے؟ | لڑکے اور لڑکی کی تربیت کا فرق | اپنی اولاد کے معاملے میں عدل و احسان سے کام لیجیے!

| جوان ہوتے بچوں کی سیرت و کردار کی تعمیر | شادی اور عورت | خاندانی جھگڑے

یونٹ 5: ہماری ذمہ داری اور لائحہ عمل

ہزار ارب ڈالر | مغربی معاشرت کی فکری بنیادیں اور ہمارا کردار | مغرب کی ثقافتی یلغار اور ہمارا کردار | زمانے کے خلاف | مصر اور اسپین | ہجری سال کے طلوع ہوتے سورج کا سوال | جڑ کا کام | اسلام کا نفاذ یا نفوذ | غیر مسلموں کے ساتھ مثبت مکالمہ | اورنگ زیب عالمگیر کا مسئلہ | دعوت دین کا ماڈل | مذہبی علماء کی زبان | زیڈان کی ٹکر | ون ڈش کا سبق | اصل مسئلہ قرآن سے دوری ہے

Description: Description: Description: Description: Description: cool hit counter