بِسمِ اللهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيمِ

Allah, in the name of, the Most Affectionate, the Eternally Merciful

Your Questions & Comments

Don't suppress questions! Questions are good for your intellectual health!!!

آپ کے سوالات و تاثرات

سوالات کو دبائیے نہیں! سوالات  ذہنی صحت کی ضمانت ہیں!!!

Search the Website New

اردو اور عربی تحریروں کو ڈاؤن لوڈ کرنے کے لئے نستعلیق فانٹ یہاں سے ڈاؤن لوڈ کیجیے۔

Home

New articles and books are added this website on 1st of each month.

 

کیا آپ کو اپنے اساتذہ کی ہر بات سے اتفاق ہے؟

 

Don't hesitate to share your questions and comments. They will be highly appreciated. I'll reply ASAP if I know the answer. Send at mubashirnazir100@gmail.com .

 

Religion & Ethics

Personality Development

Islamic Studies

Quranic Arabic Learning

Adventure & Tourism

Risk Management

Your Questions & Comments

Urdu & Arabic Setup

About the Founder

السلام علیکم!

آپ کے اساتذہ کون ہیں، کس مسلک سے تعلق رکھتے ہیں  اور کیا آپ ان کی ہر رائے سے اتفاق کرتے ہیں؟

ایک بھائی

ستمبر 2011

محترم بھائی

وعلیکم السلام ورحمۃ اللہ

جن اساتذہ سے میں نے باقاعدہ طور پر دینی علوم کی تعلیم لی ہے، وہ یہ ہیں:

1۔ ڈاکٹر  خالد ظہیر صاحب  (b. 1958) یونیورسٹی آف سنٹرل پنجاب میں اسلامک اسٹڈیز ڈیپارٹمنٹ کے ہیڈ ہیں۔  MBA کے دوران پنجاب یونیورسٹی میں  ہم نے ان سے اسلامی معاشیات کے ابواب پڑھے تھے۔  اس موضوع پر انہیں غیر معمولی دسترس حاصل ہے اور انہوں نے اسی مضمون میں پی ایچ ڈی کر رکھی ہے۔  خالد صاحب خود کو کسی خاص مسلک سے وابستہ نہیں سمجھتے ہیں۔

2۔ مفتی محمد عبداللطیف نقشبندی (b. c. 1950)جامعہ نعیمیہ لاہور میں شیخ الحدیث ہیں۔ ان سے صرف و نحو، تفسیر، حدیث اور فقہ کی بعض کتب پڑھنے کا شرف مجھے حاصل ہوا ہے۔  ان کا تعلق بریلوی مکتب فکر سے ہے۔

3۔ مفتی غلام محمد شرقپوری صاحب (b. 1957)ہیں جو بریلوی مکتب فکر سے تعلق رکھتے ہیں۔  ان کا لاہور شرقپور روڈ پر اپنا مدرسہ ہے۔   ان سے میں نے منطق، فقہ ، علم المعانی اور وراثت سے متعلق درس نظامی کی کتب پڑھی ہیں۔

4۔ حافظ محمد عزیر شمس صاحب (b. 1957) کا تعلق سلفی مکتب فکر سے ہے۔  انہوں نے جامعہ سلفیہ بنارس سے درس نظامی اور ام القری  یونیورسٹی  مکہ مکرمہ  سے ایم فل کیا ہوا ہے۔ آپ مکہ مکرمہ میں ایک تحقیقی ادارے سے وابستہ ہیں اور قدیم مخطوطات پر تحقیق کرتے ہیں۔  انہوں نے ابن تیمیہ (661-728/1263-1327)کی متعدد کتب کو ایڈٹ کر کے شائع کیا ہے۔ ان سے میں نے حدیث ، اصول حدیث، اصول فقہ اور عربی ادب کی بعض کتب پڑھی ہیں۔

ایک بات واضح کرتا چلوں کہ استاذ شاگرد کے رشتے کا یہ مطلب نہیں ہے کہ شاگرد اپنے استاذ کی ہر ہر بات سے لازماً اتفاق رائے کرے۔  ہمارے ہاں یہ غلط تصور موجود ہے کہ شاگرد استاذ کا فکری غلام بن کر رہے اور اپنے استاذ کی ہر ہر بات سے اتفاق کرے خواہ اس کی عقل اس بات کو تسلیم کرے یا نہ کرے۔ علم کی دنیا کا اصول یہ ہے کہ ایک طالب علم مختلف ماہرین فن سے  ان کے علوم حاصل کرے، ان کا موازنہ کرے اور پھر اپنے ذہن کو استعمال کرتے ہوئے اس علم میں اضافہ کرے۔اس میں نہ تو استاذ کی کوئی بے ادبی ہے اور نہ شاگرد کی ناخلفی۔  ان تمام اساتذہ کا میں بہت مشکور ہوں کہ انہوں نے مجھے بہت کچھ سکھایا تاہم اس کا یہ مطلب نہیں ہے کہ میں ہر معاملے میں ان کی رائے سے اتفاق کروں۔ بعض مسائل میں ان میں سے ہر ایک کی کچھ علمی آراء سے مجھے اختلاف ہے مگر اس کے باوجود ان کے لیے میرے دل میں وہی محبت و عقیدت موجود ہے جو کسی بھی شاگرد کو اپنے استاذ سے ہو سکتی ہے۔

ہمارے قدیم اہل علم ایسا ہی کرتے تھے مثلاً  امام ابو حنیفہ (80-150/699-767)کے دونوں شاگردوں ابو یوسف (113-182/731-798)اور محمد بن حسن شیبانی (131-189/748-805)نے ان سے 85% اجتہادی مسائل  میں اختلاف رائے کیا۔  امام شافعی (150-204/767-819)نے امام مالک (93-179/711-795)اور امام محمد بن حسن کی شاگردی اختیار کی  اور دونوں کے نقطہ ہائے نظر کا تقابلی مطالعہ کر کے اپنے ذہن کو استعمال کرتے ہوئے اپنی فقہ مرتب کی۔ وہ ان میں سے کسی بزرگ کے فکری غلام نہ بنے۔ اسی طرح پھر ان کے شاگردوں اور شاگردوں کے شاگردوں نے اپنی اپنی فقہ مرتب کیں جن میں احمد بن حنبل (164-241/780-855)، داؤد ظاہری (200-270/815-883)اور ابن جریر طبری (224-310/838-923)جیسے اہل علم موجود ہیں۔

والسلام

مبشر

مصنف کی دیگر تحریریں

Quranic Arabic Program / Quranic Studies Program / علوم القرآن پروگرام / قرآنی عربی پروگرام  /  سفرنامہ ترکی  /    مسلم دنیا اور ذہنی، فکری اور نفسیاتی غلامی  /  اسلام میں جسمانی و ذہنی غلامی کے انسداد کی تاریخ   /  تعمیر شخصیت پروگرام  /  قرآن  اور بائبل  کے دیس میں  /  علوم الحدیث: ایک تعارف   /  کتاب الرسالہ: امام شافعی کی اصول فقہ پر پہلی کتاب کا اردو ترجمہ و تلخیص  /  اسلام اور دور حاضر کی تبدیلیاں   /  ایڈورٹائزنگ کا اخلاقی پہلو سے جائزہ    /  الحاد جدید کے مغربی اور مسلم معاشروں پر اثرات   /  اسلام اور نسلی و قومی امتیاز   /  اپنی شخصیت اور کردار کی تعمیر کیسے کی جائے؟  /  مایوسی کا علاج کیوں کر ممکن ہے؟  /  دور جدید میں دعوت دین کا طریق کار   /  اسلام کا خطرہ: محض ایک وہم یا حقیقت    /  Quranic Concept of Human Life Cycle  /  Empirical Evidence of Man’s Accountability

 

Description: Description: Description: Description: Description: Description: Description: Description: Description: Description: Description: Description: Description: Description: Description: Description: Description: Description: Description: Description: Description: Description: Description: Description: Description: Description: Description: Description: Description: Description: Description: Description: Description: Description: Description: Description: page hit counter