بِسمِ اللهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيمِ

Allah, in the name of, the Most Affectionate, the Eternally Merciful

Your Questions & Comments

Don't suppress questions! Questions are good for your intellectual health!!!

آپ کے سوالات و تاثرات

سوالات کو دبائیے نہیں! سوالاتذہنی صحت کی ضمانت ہیں!!!

اردو اور عربی تحریروںکو بہتر دیکھنے کے لئے نسخ اور نستعلیق فانٹ یہاں سے ڈاؤن لوڈ کیجیے

Home

Critical Evaluation of the Works of Mubashir Nazir

 

Don't hesitate to share your questions and comments. They will be highly appreciated. I'll reply ASAP if I know the answer. Send at mubashirnazir100@gmail.com .

 

Religion & Ethics

Personality Development

Islamic Studies

Quranic Arabic Learning

Adventure & Tourism

Risk Management

Your Questions & Comments

Urdu & Arabic Setup

About the Founder

Salam

I was just surfing on your site and an idea came in mind about your work. No doubt u have done a wonderful job specially writing a translation on Imam Shafaiand a book on Ilmul Hadith. However, your work is very diversified. This is the age of specialization and one cannot comprehend all the aspect of religion and if some one attempts to do so, the quality of work is affected.

Therefore, my humble suggestion to u is that u should limit yourself to specific field in religion which is of interest and which is need of today. I hope you don't mind my view-point.

Muhammad Aqil

May 2010

Dear Brother

Assalam o alaikum

Many thanks for the suggestion. I do appreciate your sincerity and concern. That happened due to my learning style. When I want to learn something, I start writing a book on that subject. It forces me to study on that subject in deep. The same happened in the translation of Risala, and I'lm ul Hadith. It was nothing except sharing my learning to others.

For future, I've made my specialization is two areas:

1. Islamic Education: As you're aware about my project about Islamic Education. I'll specialize in the religious educational system. In that, Mulla Nizam ud Din (the founder of Dars e Nizami) is my ideal. My focus is to build a system which may serve the purpose of religious education for the next 2-3 centuries. Although it will involve a reasonable (not specialist) knowledge in all disciplines, but the educational tactics will be the specialization part. You can say that I'll be a 'jack of all' in the disciplines but a specialist in the educational strategies and tactics.

2. Modern I'lm ul Kalaam: This involves deep specialist knowledge on the issues about Islam raised by the modern thinking. It is a vast subject and I have been studying it for last 18 years. My book on slavery was a part of that project. Issues like role of women, slavery, God's Scheme & Hereafter, role of minorities, Jihad etc. are part of this Modern I'lm ul Kalaam. In this area, I target to become a specialist.

In addition to these two, I also write spontaneously on Da'wah & Social Reform. That does not require specialization. It is just a casual / entertainment work which I do when I got weary on my specialization projects. My travelogues are included in that area. I hope this will clear my position to you. Please feel free to raise further concerns. It will be highly appreciated. What about your long-term plans?

wassalaam

Mubashir

After that, I had a dialogue with Brother Aqil on my projects. It is appended below:

Aqil: You wrote: "Many thanks for the suggestion. I do appreciate your sincerity and concern. That happened due to my learning style. When I want to learn something, I start writing a book on that subject. It forces me to study on that subject in deep. The same happened in the translation of Risala, and I'lm ul Hadith. It was nothing except sharing my learning to others." It seems to be a good habit. however, it is prone to many risk as well

Mubashir: Yes, it has its own risks but I've accepted such risks. In our field of Risk Management, all risks are treated according to the "Risk Appetite" of the decision maker. If a person is accepting the risk after proper analysis, he should be willing to get the benefits / bear the losses and I'm willing for that. You can see my articles on Risk Management for details.

Aqil: You wrote: " For future, I've made my specialization is two areas: 1. Islamic Education: As you're aware about my project. I'll specialize in the religious educational system. In that, Mulla Nizam ud Din (the founder of Dars e Nizami) is my ideal. My focus is to build a system which may serve the purpose of religious education for next 2-3 centuries. Although it will involve a reasonable (not specialist) knowledge in all disciplines, but the educational tactics will be the specialist part. You can say that I'll be a 'jack of all' in the disciplines but a specialist in the educational strategies and tactics."

It sounds nice. but i have some questions on this plan.first of all , if u build an education system, there might a question on ur recognized status as to who u r? r u an educationist or a curriculum expert or an aalim or a religiousscholar or some one else who is eligible to do so. secondly, for whom u r going to design such a system i mena who ur target audience are? r they internet reader, the people of danish sara, any common person etc. to propogate ur education system, u need to have a patronage from a governmentauthority or religious forum such as danish sara or from an education and certifying institute like a university. Furhter, if u carry on ur work without any support, u may not be able to catch the attention for a sustainable period and the reader may quit quite easliy as there will be no motivation to him except self motivation. rehan told me that thepeople of his circle are not taking much interest on ur arabic internet course. i may be wrong but u can chek the sustainability and enthusaism from ur readers by conductiong a quick overview.

Mubashir: Reply to your questions is as follows:

1. You are right. I'm not recognized in terms of degree, although I've studied Dars e Nizami from private instructors. In my long-term plan, I'll get a degree in Islamic Studies from a reputed university. This will be something additional. In my opinion, if a person has done quality work, people get benefit from his work even if he does not have a degree. For example, many of our ancient scholars had no degree in Islamic Studies but people are getting benefit from their work.

2. Initially, the target audience of this course is: the people who have habit of reading on the computer. Some people did not like it because they've the habit of attending live programs in a class room setting. So this program is not for them. I requested some Arabic teachers to teach Arabic on basis of this program. He is thinking about it. The basic design is for internet users

I've received a good motivating response Al-Hamdulillah over the internet. Till today, the download statistics for this program are as follows:

Level 1 Urdu: 1036 (8 months)

Level 2 Urdu: 1061 (6 months)

Level 3 Urdu: 819 (4 months)

Level 4 Urdu: 678 (2 months)

Level 5 Urdu: 416 (1 month)

Response for English Course is relatively less. It is 393, 191, 146, 90 and 60 respectively. Since majority of my readers are Urdu readers, so this response is expected. Now I'm focusing more on English writings. In order to establish myself an English Writer will take some time.

Definitely, I need patronage from some University. I lack this area. But my opinion is that we should do what we can do. Allah will open the doors for what we don't have. I hope that if I do quality work, Insha Allah, some big university will contact me in future. I'll try to market this program after its completion but definitely it will take time.

If I fail in that area, still I'll be happy that I've done the job for Allah up to the best of what I have. A Punjabi Sufi poet has described the same concept as:

مالی دا کم پانی دینا، بھر بھر مشکاں لاوے

تے مالک دا کم پھل پُھل لانا، لاوے یا نہ لاوے

It means that the job of a gardener is to water the plants of his garden. He performs his job by carrying water bags. Growth of fruits and flowers is the job of Almighty. It is His Will whether He wants to grow them. We are happy with His Will.

Aqil: You wrote: "Modern I'lm ul Kalaam. This involves deep specialist knowledge on the issues about Islam raised by the modern thinking. It is a vast subject and I've studying it for last 18 years. My book on slavery was a part of that project. Issues like role of women, slavery, God's Scheme & Hereafter, role of minorities, Jihad etc. are part of this Modern I'lm ul Kalaam. In this area, I want to be a specialist in that area."

It seems logical. i have seen ur work in this domain and it is very nice and attractive.

Asalam O Alykum,

I visited your site; from a quick look it is very informative, however I differ to some of your opinions.

May Allah accept your efforts.

Best Regards,

Zeeshan Zia

Muscat, Oman

May 2010

Dear Brother

Wa alaikum us salam wa Rahmatullah e wa Barakatuhu

Many thanks for your email and kind comments. You do have the right to differ in opinion based on arguments. All of us are free to think and form opinions. I appreciate that you have a thinking mind. The only thing required is that we should keep good relations despite of differences in opinion.

Remember in your prayers

wassalaam

Mubashir

May 2010

السلام علیکم

مجھے لگتا ہے کہ یہ ای میل آپ کو نہیں ملی اور اسے کافی عرصہہوگیا ہے.یقینا بجلی اچانک چلی گئی ہوگی . آج ڈرافٹس دکھتے ہوے معلوم ہوا. تاخیر کی انتہائی معذرت††† ۔

"ایک اور گزارش ہے کہ مجھے اس بات کا یقین ہے جن لوگوں نے خیر القرون کا زمانہ پایا وہ ہم سے زیادہ قرآن اور حدیث کے مزاج کو سمجھتے تھے . اور صحابہ و تابعین کا زمانہ پنے والوں نے جو فقہ مرتب کی ہیں وہ اگر امت کی بھلائی میں نہ ہوتی تو الله انھیں کبھی کا نیست و نابود فرما دیتے.

امام اعظم ابو حنیفہ کا قول ہے کہ جو مسُلہ قرآن اور حدیث سے متصادم نظر آئےاسے دیوارپر مار دینا. جن کی مجلس میں ٥٠ سے ٦٠ لوگ وقت کے عالم، لغت اور نسب جاننے والے لوگ ہوتے تھے.

ہم جو اس دور کے سودی نظام میں کام کرنے والے یہ نہیں کہ سکتے کہ وہ لوگ امت کو غلط راستہ دے کر گنے ہیں. جس دور میں فقہ مرتب ہوئیں اس دور میں کیا موجودہ وقت کی تمام کتب احادیث موجود تھیں؟

جس قسم کی بات آپ کرتے ہیں فقہ کے بارے میں یہی بات غیر مقلدین/ سلفی بھی کرتے ہیں. جبکہ انہوں نے بھی فقہ کی کتب اپنے استفادہ کے لیے رکھی ہوتی ہیں.تو نیا کام شروع کرنے کی کیا ضرورت ہے؟

تو آپ کواگر کچھ کرنا ہی ہے تو ایک ایسی کوشش کی جیے کہ ننے دور کے مسائل اس طرح حل کیے جائیں کہ چاروں فقہ کے مطابق ہوں. جیسا کہ غالبن OIC کے فورم پر ہوتا ہے.

آپ چاروں ائمہ کی تاریخ اور ان کا آپس میں برتاؤ کو ملاحظہ کرنے کے بعد اس بارے میں سوچیں.

اس وقت کسی ننے مکتب فکر کی بجائےدیں کی اشاعت اور عمل پر زور دینے کی ضرورت ہے.

باقی online courses والا انداز ضرور مفید ہوگا. اسی قسم کی کاوش www.sunnipath.com ††پر ملی ہے. مگر میں اس کے معیاری ہو نے بارے میں ابھی نہیں جانتا.

اس وقت بھی ٤ فقہ میں بیک وقت مہارت رکھنے والے لوگ موجود ہیں. امت میں فقہ کی بنیاد پر کوئی تفریق نہیں ( مثال: تبلیغی جماعت کے نام سے جو کام پوری دنیا میں ہو رہا ہے اس میں تمام فقہ کے لوگ کام کر رہے ہیں اور کسی ایک فقہ کی طرف لوگوں کو نہی بلایا جارہا). جو اندرونی گروہ بندی ہندوپاک یا اور جگہہے دنیادار علما کی وجہ سے ہے. میں یقین رکھتا ہوں کہ حق پرست و حق گو عالم اب بھی موجود ہیں.

والسّلام

احمد، کویت

اپریل 2010

ڈئیر احمد بھائی

السلام علیکم و رحمۃ اللہ وبرکاتہ

آپ کی یہ میل پہلی مرتبہ مجھے ملی ہے۔ اس ای میل اور تذکیر کا بہت بہت شکریہ۔ اللہ تعالی آپ کو جزائے خیر دے۔ میل پر تبصرہ پیش خدمت ہے:

1۔ آپ کی اس بات سے مجھے سو فیصد اتفاق ہے کہ ہمارے اسلاف ہم سے زیادہ قرآن و حدیث کے مزاج کو سمجھتے تھے اور انہوں نے صحابہ و تابعین کا زمانہ پایا۔ یہ حضرات امت کو کبھی غلط راستہ دے کر نہیں جا سکتے۔

2۔ نجانے آپ نے یہ نتیجہ کیسے اخذ کر لیا کہ میں ان حضرات کے کام کو غلط سمجھتا ہوں یا ایک نیا مکتب فکر بنانے کا خواہش مند ہوں۔ اللہ تعالی ایسے کسی کام سے مجھے اور ہم سب کو محفوظ رکھے۔ اس سے میں اللہ کی پناہ مانگتا ہوں۔ اگر میری کسی تحریر میں آپ کو یہ تاثر ملا ہو تو اس کی نشاندہی کر دیجیے، میں اس کی فوراً اصلاح کر لوں گا۔ یہ آپ کا مجھ پر ذاتی احسان ہو گا۔

بحیثیت مجموعی ان بزرگوں کا کام شاندار ہے اور اس سے استفادہ کیے بغیر ہم کبھی آگے نہیں بڑھ سکتے۔ اگر کہیں کسی عالم نے غلطی کی ہے، تو اس سے ان کی شان یا عظمت پر کوئی فرق نہیں پڑتا۔

برنارڈ شا کا ایک مقولہ یاد آ رہا ہے: "میں قد میں شیکسپیئر سے بہت چھوٹا ہوں مگر اس کے کندھے پر کھڑا ہوں۔" علم کی دنیا میں یہی معاملہ ہم سب کا ہے۔ ہم سے پہلے کے لوگ جو کام کر گئے، اسی کو ہم نے آگے بڑھانا ہے۔ اسی طرح امت مسلمہ کا اجتماعی قد بڑھتا جائے گا۔ اگر ہم سکریچ سے کوئی کام شروع کریں گے تو یہ Reinventing of wheel والی بات ہو گی۔

بعض پرجوش غیر مقلدین کے جس طرز عمل کی طرف آپ نے توجہ دلائی ہے، میں اس سے بری الذمہ ہوں۔ ائمہ کے پورے ادب و احترام اور ان کے کام سے استفادے کے بغیر ہم آگے نہیں بڑھ سکتے۔ یہی بات میں ان حضرات کی خدمت میں بھی ادب و احترام کے ساتھ پیش کرنے کی کوشش کرتا رہتا ہوں۔

3۔ میں ہرگز کوئی نیا کام نہیں کرنا چاہتا۔ میں تو بس یہی کر رہا ہوں کہ جو دین رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم دے گئے، اسی کی طرف لوگوں کو بلایا جائے اور اگر کہیں کوئی غلط فہمی یا اخلاقی خرابی پیدا ہو گئی ہو تو اس کی احسن انداز میں وضاحت کر دی جائے۔ اور اگر کہیں مجھے غلط فہمی ہوئی ہو یا میرے اندر کوئی اخلاقی خرابی ہو تو اس کی اصلاح کر لوں۔ بس یہی میرے کام کا مقصد ہے۔

اگر آپ نے میری تحریروں کا تفصیلی مطالعہ کیا ہو تو آپ کے علم میں یہ بات ہو گی کہ میں زیادہ تر ان موضوعات پر لکھتا ہوں جن کا تعلق علم کے فروغ، تزکیہ نفس اور کردار کی اصلاح سے ہو یا پھر اسلام دشمنوں کے اسلام پر اعتراضات اور ان کا جواب میرا اصل موضوع ہے۔ غلامی سے متعلق کتاب اسی سے متعلق تھی۔ یہ سب تحریریں اس لنک پر موجود ہیں۔ آپ ہر ایک کا موضوع دیکھ سکتے ہیں:

http://www.mubashirnazir.org/Ethics%20&%20Religion.htm

فقہ میری تحریروں کا بنیادی میدان نہیں ہے۔ جزوی طور پر اگر کسی فقہی مسئلے سے اسلام پر کوئی اعتراض پیدا ہو رہا تو اس پر میں نے بحث کی ہے لیکن مجموعی تحریروں میں ان کی تعداد بہت ہی کم ہے۔

4۔ آپ نے صحیح فرمایا کہ اس وقت امت میں فقہ کی بنیاد پر تفریق نہیں ہے۔ یہ اللہ کا بہت بڑا احسان ہے۔ قرون وسطی میں ایسا تھا ۔تاتاری بغداد پر حملہ آور ہو رہے تھے اور ہمارے فقہاء حنفی و شافعی اختلافات کے باعث ایک دوسرے پر کیچڑ اچھالنے پر مصروف تھے۔ الحمد للہ اب ایسا نہیں ہے اور ہم باہمی نفرت کے اس دور سے باہر آ چکے ہیں۔تبلیغی جماعت کی یہ بہت بڑی خوبی ہے کہ انہوں نے سب کو اپنے اندر سمویا ہے۔ اللہ انہیں جزائے خیر دے کہ انہوں نے ایک اچھی مثال قائم کی ہے۔

اگر میرے بارے میں یہ تاثر آپ کو کچھ دوسرے علماء کی تحریروں سے ملا ہے جن کے کسی اچھے کام کی میں نے کبھی تعریف کی ہو تو یہ عرض کرتا چلوں کہ کسی کی ایک اچھائی کو acknowledge کرنا الگ بات ہے اور ان کا مکمل پیروکار بن جانا دوسری بات۔ جیسے اسی میل میں میں نے تبلیغی جماعت کی ایک اچھائی کی تعریف کی ہے مگر میں ان کا پیروکار نہیں ہوں۔ یہی معاملہ دوسرے علماء کے ساتھ ہے۔ آپ میری تحریروں کے ذریعے ہی میرے بارے میں تاثر قائم کیجیے، نہ کہ دوسرے اہل علم کی تحریروں کے ذریعے۔ وہ اپنے قول و فعل کے خود ذمے دار ہیں اور میں اپنے قول و فعل کا۔

ماضی میں فقہ کی بنیاد پر یہ تفریق تھی لیکن الحمد للہ امت نے اس معاملے میں اتفاق پیدا کر لیا ہے۔ یہ بہت بڑی کامیابی ہے۔ عرب ممالک میں بھی کام انہی بنیادوں پر ہوتا ہے کہ چاروں ائمہ فقہ (بلکہ دیگر فقہاء بھی جو زیادہ مشہور نہ ہوئے) کا کام ہماری مشترکہ میراث ہے۔ اور اس کی بنیاد پر کام کیا جائے۔

آن لائن کورسز میں فقہ اور علم کلام کے کورسز میں میری یہی اپروچ ہو گی جس کا ذکر آپ نے کیاہے، انشاء اللہ۔ سنی پاتھ کے کورسز میں نے دیکھے تھے مگر یہ سب paid ہیں۔ ان کی جو آؤٹ لائز دیکھی تھیں، ان سے تو کوالٹی بہت اچھی لگ رہی ہے۔ اللہ تعالی ان کے کام میں برکت دے۔

توجہ دلانے کے لئے بہت شکریہ۔ اللہ آپ کو جزائے خیر دے۔ میری تحریروں میں ان مقامات کی نشاندہی کر دیجیے جو غلط فہمی پیدا کر رہی ہوں تو بہت شکر گزار ہوں گا۔

دعاؤں کی درخواست ہے۔ مستقبل میں بھی توجہ دلاتے رہیے گا۔ ہم سب انسان ہیں اور غلطی کر سکتے ہیں۔ توجہ دلانے سے ہی غلطیوں کا ازالہ ہوا کرتا ہے۔ میں آپ کے خلوص کی بہت قدر کرتا ہوں۔

والسلام

مبشر

 

مصنف کی دیگر تحریریں

Quranic Arabic Program / Quranic Studies Program / علوم القرآن پروگرام / قرآنی عربی پروگرام/سفرنامہ ترکی/††مسلم دنیا اور ذہنی، فکری اور نفسیاتی غلامی/اسلام میں جسمانی و ذہنی غلامی کے انسداد کی تاریخ ††/تعمیر شخصیت پروگرام/قرآن اور بائبلکے دیس میں/علوم الحدیث: ایک تعارف ††/کتاب الرسالہ: امام شافعی کی اصول فقہ پر پہلی کتاب کا اردو ترجمہ و تلخیص/اسلام اور دور حاضر کی تبدیلیاں ††/ایڈورٹائزنگ کا اخلاقی پہلو سے جائزہ ††/الحاد جدید کے مغربی اور مسلم معاشروں پر اثرات ††/اسلام اور نسلی و قومی امتیاز ††/اپنی شخصیت اور کردار کی تعمیر کیسے کی جائے؟/مایوسی کا علاج کیوں کر ممکن ہے؟/دور جدید میں دعوت دین کا طریق کار ††/اسلام کا خطرہ: محض ایک وہم یا حقیقت/Quranic Concept of Human Life Cycle/Empirical Evidence of Godís Accountability

 

Description: page hit counter