RTP LIVE Slot Gacor Slot Terbaru Slot Deposit Pulsa Slot Online Slot Hoki Situs Slot Slot Gacor

 

 

قرآن مجید میں آیت سجدہ کا عمل

سوال:سر آیت سجدہ پر میرا سبق  ہے۔ کیا  میں  اس کو یاد کر نے کے لئے  جتنی دفعہ  پڑھوں گی  تو کیااتنی مرتبہ سجدہ کروں گی؟ اگرایک وقت میں  میں ایک ہی آیتِ سجدہ  30 دفعہ  پڑھوں تو سجدہ  کتنی دفعہ  کرنا ہے؟ 

 جواب:اس میں سنت یہ ہے کہ قرآن مجید میں جہاں سجدہ کا حکم ہو تو رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم سجدہ کر لیتے تھے۔  اس  میں چاہیں تو ایک بار سجدہ ہی کافی ہوتا ہے۔ اس کی تعداد زیادہ نہیں ہے کہ پورے قرآن مجید میں 24-25 ہی آیات ہیں ۔ پریکٹیکل تو یہی ہوتا ہے کہ آپ جب تلاوت کریں گی تو ایک آیت ہی آئے گی اور کوئی نہیں آئے گی۔ ان سجدہ والی آیات کو پڑھیں تو آپ کو یہی نظر آئے گا کہ اللہ تعالی نے فرمایا کہ “اللہ تعالی سے سجدہ کرو” تو اس کے جواب میں رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم عمل کر لیا کرتے تھے۔ ایسا ہی آپ نے کرنا ہے۔ 

خواتین کو کبھی ایسا ہو جاتا ہے کہ ان پر نماز منع ہوتی ہے۔ اس میں اگر آپ نے وہ آیت پڑھی ہو تو بس اسے نوٹ کر لیجیے گا۔ جب بھی نماز پڑھنے کے قابل ہوں تو اس وقت سجدہ کر لیجیے گا۔ 

   سوال :اکثر کوئی نہ کوئی   میسج آتے رہتے ہیں کہ ” کچھ لوگ قرآن پاک میں تبدیلی  کر کے بیچتے ہیں”۔ میرا سوال یہ ہے کہ  قرآن پاک کی  حفاظت کا  ذمہ تو اللہ  نے خود لیا ہے،  پھر  کیسے کوئی اس میں تبدیلی کر  سکتا ہے؟

 جواب: قرآن مجید کو اللہ تعالی نے قدیم عربی زبان میں نازل کیا ہے اور اس میں کوئی تبدیلی نہیں کر سکتا ہے۔ جس وقت رسول اللہ صلی اللہ  علیہ وآلہ وسلم تک قرآن پہنچتا تھا تو فرشتے اسے سنبھال کر لاتے تھے اور کوئی جن اس میں کوئی حرکت نہیں کر سکتا تھا۔  اگرکوئی کوشش کرتا تو شعلے اس جن پر لگتے اور وہ مر جاتا تھا۔  قرآن مجید میں سورۃ الجن میں یہی موضوع ہے۔ 

اب آپ کا سوال اگلے مرحلے پر ہے۔ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے زمانے کی عربی زبان محفوظ ہے  اور اوریجنل قرآن تو اب تک ویسے ہی موجود ہے اور اس میں کوئی تبدیلی نہیں ہو سکتی ہے۔ 

ترجمہ کرنے میں انسان سے غلطی ہو سکتی ہے اور کوئی مفاد پرست انسان بھی جان بوجھ کر فراڈ کے طور پر ترجمہ کر سکتا ہے۔ لیکن اللہ تعالی نے اس کا اہتمام بھی کر دیا ہے کہ قرآن کے ہر زبان میں ترجمے ہو چکے ہیں۔ اب اگر کوئی شخص فراڈ کرے تو آپ کسی بھی عالم دین کا قرآن کا ترجمہ آپ خود چیک کر سکتی ہیں۔ اگر ایک مخلص عالم نے ترجمے میں غلطی کی ہے تو  تب بھی کوئی مسئلہ نہیں ہے کہ آپ اسی آیت کا ترجمہ آپ دوسرے اسکالر کے ترجمے میں میچ کر سکتی ہیں۔ میں نے جتنے ترجمے دیکھے ہیں، اس میں کوئی بڑی غلطی نظر نہیں آئی ہے۔ ترجموں میں صرف اتنا فرق ہے کہ ہر اسکالر نے اپنے علاقے کے لہجے میں اردو کا ترجمہ کیا ہے اور کوئی  بڑا ایشو نہیں ہے۔ ایمان، شریعت اور اخلاقیات میں سب ترجموں میں ایک ہی بات ہے۔ اب آپ کو کسی ترجمے میں غلطی لگے تو آپ دوسرے ترجمے میں چیک کر کے کنفرم کر سکتی ہیں۔ 

والسلام

محمد مبشر نذیر

سورۃ الفرقان – سورۃ السجدہ 25-32

علم الفقہ ۔ اردو لیکچرز